تجارتی جنگ کاگراف اوپر اور امریکی تیل کی منڈی کا گراف نیچے۔ سخت پریشانی ہے

چین کے ساتھ جاری تجارتی جنگ بہت ساری صنعتوں کو متاثر کررہی ہے۔ صدر ٹرمپ کی دھمکیوں اور جنگ بندی کے دورانیوں کی طرز پر عالمی مارکیٹ میں بھی اتار چڑھاؤ کو بڑھاوا ملتا رہتا ہے۔

اگست کے آغاز میں ، صدر ٹرمپ کی طرف سے چینی مصنوعات کی مزید 300 بلین درآمدات پر محصولات عائد کرنے کی دھمکی کے ذریعہ علمی منڈی کو ایک دم دھچکا لگا۔ مارکیٹوں پر وسیع پیمانے پر اثر پڑا ، لیکن توانائی کے شعبے کو خاص طور پر سخت نقصان پہنچا۔ خام تیل کی قیمتوں کو چار سالوں میں سب سے بڑی کمی کا سامنا کرنا پڑا۔

اس کے بعد صدر ٹرمپ چھٹی کے دنوں میں ہونے والے خوردہ اخراجات کے خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے اس سے پیچھے ہٹ گئے ۔گویا خطرے پر مزید توجہ دیں تو یہ بات سامنے آتی ہے کہ، 10 سالہ یو ایس ٹریژری بانڈ پر محاصل حال ہی میں 2 سالہ امریکی ٹریژری پر پیداوار سے کم ہوگئے۔ اس پیداوار میں منحنی خطرہ اس وقت ہوتا ہے جب سرمایہ کار سرمائے کی حفاظت کے لئے آتے ہیں لہٰذا تاریخی اعتبار سے یہ ایک  شدیدکساد بازاری کا اشارہ ہے

Care to Share?

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

twelve − three =