ہفتہ, اکتوبر 31 Live
Shadow

امریکی حزب اختلاف کے سینیٹرزکا ٹرمپ کی مالیاتی معلومات کے لیے ڈؤئچے بینک کے چیف ایگزیکیٹو کو خط : بینک کا معلومات دینے سے انکار

امریکی حزب اختلاف کی ڈیموکریٹک پارٹی کے چار سینیٹرز نے سات اپریل کوڈؤئچے بینک کے چیف ایگزیکیٹو آفیسر کو خط لکھ کر صدر ٹرمپ کے کاروباری لین دین سے متعلق تفصیلات مانگی تھیں۔امریکی سینیٹرز کے مطابق اس خط کا مقصد یہ جاننا تھا کہ بینک سے صدر ٹرمپ کو کون سے ذاتی فائدے ملتے رہے ہیں اور جواب میں ٹرمپ حکومت بینک کو کس قسم کی سہولیات دیتی رہی ہے۔

ڈی ڈبلیو کی ایک رپورٹ کے مطابق ان ڈیموکریٹک سینیٹرز میں رچرڈ بلومنتھال، شیروڈ براؤن، کرس فان ہولن اور ایلزبتھ وارن شامل ہیں۔ صدر ٹرمپ کے کاروبار اور پراپرٹی میں ڈوئچے بینک کو مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ ان کے مخالفین کو خدشہ ہے کہ کورونا کے بحران کے دوران بینک نے صدر ٹرمپ کو قرضوں کی ادائیگی کے حوالے سے ترجیحی سہولیات دی ہیں۔

لیکن اطلاعات کے مطابق ڈوئچے بینک نے قانونی مجبوریوں کا جواز دے کر ان کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

خبر رساں ادوارں روئٹرز اور بلومبرگ کے مطابق، اکیس اپریل کو اپنے جواب میں بینک نے کہا، ”ہمیں امید ہے کہ آپ اس طرح کی خفیہ معلومات کے حوالے سے ڈوئچے بینک کی قانونی مجبوریوں کو سمجھ سکتے ہیں۔‘‘اپنے جواب میں بینک نے یہ بھی واضح کیا کہ اس طرح کی درخواست انفرادی اراکان کی طرف سے دیے جانے اور کانگریس کے قوانین کے تحت با اختیار کمیٹیوں کے طرف سے دیے جانے میں بڑا فرق ہوتا ہے۔

روئٹرز کو دیے گئے ایک بیان میں سینیٹر فان ہولن نے بینک کی طرف سے عدم تعاون کے جواب کو ‘ناکافی اور غیرذمہ دارنہ‘ قرار دیتے ہوئے کہا، ”امریکی عوام جواب چاہتے ہیں اور اس سے کم کچھ بھی قابل قبول نہیں۔‘‘

واضح رہے کہ ڈوئچے بینک پہلے ہی امریکی محکمہ انصاف کی طرف سے زیر تفتیش ہے۔

اگلے ماہ امریکی سپریم کورٹ میں ایک مقدمے کی سماعت کے دوران اس سوال پر بحث متوقع ہے کہ آیا کانگریس کی طاقتور کمیٹیاں بینک کو مجبور کر سکتی ہیں کہ وہ صدر ٹرمپ کے مالی معامالات کی تفصیلات عدالت کے سامنے پیش کریں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں