اتوار, نومبر 28 Live
Shadow
سرخیاں
نائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیاماحولیاتی تحفظ کی مہم کیوں ناکام ہے؟: کینیڈی پروفیسر نے امیر مغربی ممالک کو زمہ دار ٹھہرا دیااتحادیوں کو اکیلا نہیں چھوڑا جائے گا، تحفظ ہر صورت یقینی بنائیں گے: امریکی وزیردفاعروس اس وقت آزاد دنیا کا قائد ہے: روسی پادری اعظم کا عیسائی گھرانوں کی امریکہ سے روس منتقلی پر تبصرہ

امریکی انتخابات اور بعد کی صورتحال پر فوج کے کردار کی بازگشت: جائنٹ چیف کی کانگریس میں طلبی، وضاحت طلب

امریکہ میں ایک اعلیٰ جنرل نے جمعے کو کانگریس کے سامنے پیش ہوتے ہوئے بیان دیا ہے کہ آئندہ صدارتی انتخاب کے دوران امریکی فوج کا کوئی کردار نہیں ہو گا، اور نہ ہی فوج نومبر کے انتخابات میں پیش آنے والے کسی تنازع کو حل کرنے کی کوشش میں ملوث ہو گی۔

امریکی خبر رساں اداروں کے مطابق امریکی جوائنٹ چیفس آف سٹاف جنرل مارک ملی کا بیان کانگریس کے اجلاس کے سرکاری دستاویزات سے لیک ہوا ہے۔ جنرل سے کانگریس میں انتخاب کے نتائج میں ممکنہ تنازع کے حوالے سے سوالات کیے گئے جس کے ردعمل میں انھوں نے کہا کہ صدارتی انتخاب کے دوران امریکی فوج غیر سیاسی رہے گی۔

واضح رہے کہ امریکی صدراتی انتخابات کے دونوں امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ اور جو بائیڈن انتخابات میں ممکنہ بے ضابطگیوں کا ذکر کر چکے ہیں۔ جس کے بعد ملک بھر میں ہنگامی صورتحال یا کسی تیسری قوت کے مداخلت کی چہ مگوئیاں دنیا بھر میں کی جا رہی ہیں۔ ایسے میں مائیک ملی کا کانگریس میں طلب کیا جانا اور ممکنہ کردار پر سوالات کا ہونا تشویش کو بڑھانے کا مؤجب ہے۔

تاہم امریکی جنرل نے واضح طور پر کہا ہے کہ “انتخابات سے متعلق کسی تنازع کی صورت میں قانون کے مطابق امریکی عدالتوں اور امریکی کانگریس کو حل تلاش کرنا ہوتا ہے، نہ کہ امریکی فوج کو، فوج غیر سیاسی رہے گی، میں اس مرحلے کے دوران امریکی فوج کا کوئی کردار نہیں دیکھ رہا۔۔۔ ہم امریکہ کے آئین سے قطعاً روگردانی نہیں کریں گے۔”

رواں ماہ کے اوائل میں پینٹاگون نے بھی چہ مگوئیوں کے بڑھنے پر بیان میں کہا تھا کہ امریکی آئین کے مطابق کسی سیاسی یا انتخابی تنازع کی صورت میں فوج کی ثالثی کا کوئی کردار نہیں ہوتا، فوج اس قانونی حیثیت پر ہی قائم رہے گی۔

انتخابات میں فوج کے کردار کی چہ مگوئیوں کو پھیلانے میں بڑا کردار امریکہ کے لبرل طبقے کے میڈیا کا ہے، جو اس موضوع پر مسلسل عوام میں تحفظات کو پھیلا رہا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ فوج کو سیاسی بنا رہے ہیں۔ امریکی لبرل میڈیا اس تناظر میں صدر ٹرمپ کے جارج فلوئیڈ کی ہلاکت کے بعد ملک بھر میں ہنگاموں پر قابو پانے کے لیے فوجی دستے تعینات کرنے کے سنگین اقدام کے اشارے کو بطور حوالہ استعمال کر رہا ہے۔

دوسری جانب صدارتی انتخاب میں ڈیموکریٹ امیدوار جوبائیڈن نے بھی اپنی مہم میں فوج کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ انھیں خدشہ ہے صدر ٹرمپ نومبر انتخابات میں فوج کو استعمال کریں گے، تاہم انہیں فوج پر بھروسہ ہے، اور اگر ٹرمپ نے ایسا کچھ کرنے کی کوشش کی تو فوج ٹرمپ کو وائٹ ہاؤس سے بےدخل کر دے گی۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us