ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

ویتنام اور سویزرلینڈ ڈالر پر اثرانداز ہورہے ہیں: امریکی محکمہ خزانہ نے ہندوستان، چین اور تھائی لینڈ کو بھی تنبیہ جاری کر دی

امریکی محکمہ خزانہ نے ویتنام اور سویزرلینڈ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ڈالر پر اثرانداز ہو رہے ہیں۔ محکمے نے امریکی معاشی تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے مزید ممالک کو بھی تنبیہ جاری کی ہے، ان ممالک میں ہندوستان، چین اور تھائی لینڈ شامل ہیں۔

وزارت خزانہ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکی مزدوروں اور کمپنیوں کی معاشی ترقی اور تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے اقدام ناگریز تھا، ڈالر میں تجارت کرنے والے ممالک کو معاہدوں کی پاسداری کرنا ہو گی، کسی بیرونی اثرورسوخ کو برداشت نہیں کیا جائے گا، رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ محکمہ خزانہ ویتنام اور سویزرلینڈ سمیت تمام ممالک پر نظر رکھے گا اور ایسی تمام حرکات کو ختم کروائے گا جن سے امریکی معیشت کا فائدہ غیر ملکی کمپنیوں کو پہنچے۔

واضح رہے کہ ڈالر پر اثرانداز ہونے کا اندازہ امریکہ تین عوامل سے کرتا ہے۔ اگر کسی ملک کا امریکہ سے تجارت کے حجم میں فرق 20 ارب ڈالر سے زائد کا ہو تو اسے زیر نظر رکھا جاتا ہے، یوں اگر کسی ملک کے کرنٹ اکاؤنٹ میں مالیت اسکی ملکی پیداوارکی نسبت دو فیصد سے زائد ہو جائے تو بھی متعلقہ ملک کو مشکوک سمجھا جاتا ہے، اور اگر کوئی ملک اپنی ملکی پیداوار کی نسبت دو فیصد سے بڑھ کر نقدی کا تبادلہ کرنے لگے تو بھی اسے ڈالر پر اثر انداز ہونے کی کوشش سمجھا جاتا ہے۔

اس معیار پر سویزرلینڈ اور ویتنام دونوں پورا اترے ہیں، یہی وجہ ہے کہ انہیں تنبیہ جاری کر دی گئی ہے۔ ویتنام کا تجارتی فرق 57 ارب ڈالر سے بھی زائد کا ہے، جس پر ویتنام پر اپنے روپے کی قدر کو جان بوجھ کر وقعت سے نیچے رکھنے کا الزام ہے، تاکہ اسی برآمدات میں اضافہ ہو، جبکہ سویزرلینڈ نے الزامات کی تردید کی ہے۔

چین کو گزشتہ سال آگست میں زیر معائنہ فہرست میں شامل کیا گیا تھا اور ایشیائی ملک اب بھی فہرست میں شامل ہے، چہن کے خلاف کسی قسم کے اقدامات نہیں کیے گئے ہیں۔

ہندوستان کو بھی پچھلے سال تنبیہ جاری ہوئی تھی، تاہم رواں سال اسے خطرے والی فہرست سے نکال کر زیر معائنہ فہرست میں شامل کردیا گیا ہے۔ ہندوستانی حکومت پر الزام تھا کہ یہ روپے کی لین دین پر اثرانداز ہوتی ہے اور سرمایہ کاروں کے لیے آسانیاں پیدا کرنے میں ناکام ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us