پیر, اکتوبر 25 Live
Shadow
سرخیاں
ترک صدر ایردوعان کا اندرونی سیاست میں مداخلت پر 10 مغربی ممالک کے سفراء کو ناپسندیدہ قرار دینے کا فیصلہبحرالکاہل میں چینی و روسی جنگی بحری مشقیں مکمل – ویڈیونائجیریا: جیل حملے میں 800 قیدی فرار، 262 واپس گرفتار، 575 تاحال مفرورترکی: فسلطینی طلباء کی جاسوسی کرنے والا 15 رکنی صیہونی جاسوس گروہ گرفتار، تحقیقات جاریامریکی انتخابات میں غیر سرکاری تنظیموں کے اثرانداز ہونے کا انکشاف: فیس بک کے مالک اور دیگر ہم فکر افراد نے صرف 2 تنظیموں کو 42 کروڑ ڈالر کی خطیر رقم چندے میں دی، جس سے انتخابی عمل متاثر ہوا، تجزیاتی رپورٹبنگلہ دیش: قرآن کی توہین پر شروع ہونے والے فسادات کنٹرول سے باہر، حالات انتہائی کشیدہ، 9 افراد ہلاک، 71 مقدمے درج، 450 افراد گرفتار، حکومت کا ریاست کو دوبارہ سیکولر بنانے پر غورنیٹو کے 8 روسی مندوبین کو نکالنے کا ردعمل: روس نے سارا عملہ واپس بلانے اور ماسکو میں موجود نیٹو دفتر بند کرنے کا اعلان کر دیاشام اور عراق سے داعش کے دہشت گرد براستہ ایران افغانستان میں داخل ہو رہے ہیں، جنگجوؤں سے وسط ایشیائی ریاستوں میں عدم استحکام کا شدید خطرہ ہے: صدر پوتنآؤکس بین الاقوامی سیاست میں کشیدگی و عدم استحکام بڑھانے اور اسلحے کی نئی دوڑ کا باعث ہو گا: چین اور مشرقی ممالک کے خلاف مغرب کے نئے عسکری اتحاد پر روسی ردعملایف بی آئی نے خفیہ کارروائی میں جوہری آبدوز ٹیکنالوجی بیچتے دو فوجی انجینئر گرفتار کر لیے

ویتنام اور سویزرلینڈ ڈالر پر اثرانداز ہورہے ہیں: امریکی محکمہ خزانہ نے ہندوستان، چین اور تھائی لینڈ کو بھی تنبیہ جاری کر دی

امریکی محکمہ خزانہ نے ویتنام اور سویزرلینڈ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ڈالر پر اثرانداز ہو رہے ہیں۔ محکمے نے امریکی معاشی تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے مزید ممالک کو بھی تنبیہ جاری کی ہے، ان ممالک میں ہندوستان، چین اور تھائی لینڈ شامل ہیں۔

وزارت خزانہ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکی مزدوروں اور کمپنیوں کی معاشی ترقی اور تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے اقدام ناگریز تھا، ڈالر میں تجارت کرنے والے ممالک کو معاہدوں کی پاسداری کرنا ہو گی، کسی بیرونی اثرورسوخ کو برداشت نہیں کیا جائے گا، رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ محکمہ خزانہ ویتنام اور سویزرلینڈ سمیت تمام ممالک پر نظر رکھے گا اور ایسی تمام حرکات کو ختم کروائے گا جن سے امریکی معیشت کا فائدہ غیر ملکی کمپنیوں کو پہنچے۔

واضح رہے کہ ڈالر پر اثرانداز ہونے کا اندازہ امریکہ تین عوامل سے کرتا ہے۔ اگر کسی ملک کا امریکہ سے تجارت کے حجم میں فرق 20 ارب ڈالر سے زائد کا ہو تو اسے زیر نظر رکھا جاتا ہے، یوں اگر کسی ملک کے کرنٹ اکاؤنٹ میں مالیت اسکی ملکی پیداوارکی نسبت دو فیصد سے زائد ہو جائے تو بھی متعلقہ ملک کو مشکوک سمجھا جاتا ہے، اور اگر کوئی ملک اپنی ملکی پیداوار کی نسبت دو فیصد سے بڑھ کر نقدی کا تبادلہ کرنے لگے تو بھی اسے ڈالر پر اثر انداز ہونے کی کوشش سمجھا جاتا ہے۔

اس معیار پر سویزرلینڈ اور ویتنام دونوں پورا اترے ہیں، یہی وجہ ہے کہ انہیں تنبیہ جاری کر دی گئی ہے۔ ویتنام کا تجارتی فرق 57 ارب ڈالر سے بھی زائد کا ہے، جس پر ویتنام پر اپنے روپے کی قدر کو جان بوجھ کر وقعت سے نیچے رکھنے کا الزام ہے، تاکہ اسی برآمدات میں اضافہ ہو، جبکہ سویزرلینڈ نے الزامات کی تردید کی ہے۔

چین کو گزشتہ سال آگست میں زیر معائنہ فہرست میں شامل کیا گیا تھا اور ایشیائی ملک اب بھی فہرست میں شامل ہے، چہن کے خلاف کسی قسم کے اقدامات نہیں کیے گئے ہیں۔

ہندوستان کو بھی پچھلے سال تنبیہ جاری ہوئی تھی، تاہم رواں سال اسے خطرے والی فہرست سے نکال کر زیر معائنہ فہرست میں شامل کردیا گیا ہے۔ ہندوستانی حکومت پر الزام تھا کہ یہ روپے کی لین دین پر اثرانداز ہوتی ہے اور سرمایہ کاروں کے لیے آسانیاں پیدا کرنے میں ناکام ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us