ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

چین اور روس کو مل کر کورونا کے بعد عالمی سیاسی وائرس کے خلاف بھی لڑنا ہے: چینی وزیر خارجہ وینگ ژی

چینی وزیر خارجہ وینگ ژی نے دنیا میں استحکام کے لیے روس کے ساتھ مل کر نئی حکمت عملی بنانے کا اعلان کیا ہے۔ چینی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ ماسکو اور بیجنگ کے مابین جاری تعاون دنیا میں استحکام کے لیے اہم کردار ادا کر رہا ہے، اور اب اس میں مزید مظبوطی کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

پریس سے گفتگو میں ژی کا کہنا تھا کہ چین اور روس میں اچھی ہمسائیگی کے معاہدے کو بیس سال ہو گئے ہیں، اب اس میں مزید تعاون کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔

ژی نے کورونا وباء سے نمٹنے کے لیے دونوں ممالک کے تعاون کو بھی سراہا اور کہا کہ دونوں ممالک کو عالمی سیاسی وائرس سے بھی اسی قوت کے ساتھ لڑنا ہے۔ دنیا میں عدم استحکام بڑھ رہا ہے ایسے میں دونوں ہمسائیہ ممالک کو تعاون بڑھانے کی ضرورت ہے، تاکہ دونوں ممالک اپنے مفادات اور خود مختاری کا تحفظ کر سکیں۔

اس موقع پر اعلیٰ چینی عہدے دار نے دونوں ممالک کے معاشی تعاون کو بھی سراہا، اور مستقبل میں بیلٹ اینڈ روڈ منصوبے میں مزید تیزی لانے پر زور دیا۔ وزیر خارجہ نے یورپ اور ایشیا میں روابط بڑھانے اور یوریشیائی معاشی اتحاد بنانے کی اہمیت کو بھی اجاگر کیا۔

ژی نے دونوں ممالک کی قربت پر امریکی بے چینی کی بھی مذمت کی اور اسے امریکہ کے خلاف اتحاد کے مفروضوں کی نفی کی۔

چینی وزیر خارجہ نے جمہوریت اور انسانی حقوق کی امریکی تعریف کو ایک بار پھر تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ اس سے دراصل امریکہ دیگر ممالک میں مداخلت کا رستہ تلاش کرتا ہے۔ وزیر خارجہ ژی کا کہنا تھا کہ امریکی رویہ عالمی استحکام میں بڑے مسائل کا پیش خیمہ ہے، امریکہ کو رویہ ترک کرنا ہو گا۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us