پیر, دسمبر 6 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

عالمی فوجداری عدالت کا فلسطینیوں کے خلاف روا جرائم کی تحقیقات کا حکم: وکیل سے ملاقات پر قابض صیہونی انتظامیہ برہم، فلسطینی وزیر خارجہ کو دھر لیا، سفری دستاویزات چھین لیے

فلسطین پر قابض صیہونی انتظامیہ نے فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی کو عالمی فوجداری عدالت میں ایک اہم ملاقات سے واپسی پر زبردستی دھر لیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق صیہونی انتظامیہ نے فلسطینی وزیر خارجہ کو مغربی کنارے جاتے ہوئے روکا، پوچھ تاچھ کی اور انکا مقبوضہ علاقے کا راہگیری ویزہ بھی منسوخ کر دیا۔

فلسطینی حکام کے مطابق قابض صیہونی انتظامیہ کے حساس اداروں نے آدھے گھنٹے تک وزیر خارجہ سے سوال جواب کیے اور انکے ساتھ شریک سفر افراد سے بھی لمبی پوچھ تاچھ کی گئی۔

اطلاعات کے مطابق علاقائی ممالک کی جانب سے تشویش پر صیہونی انتظامیہ نے وزیر خارجہ کو چھوڑ دیا ہے تاہم انکا مقبوضہ علاقوں سے آزادانہ گزرنے کا خصوصی اجازت نامہ ان سے چھین لیا گیا ہے، واضح رہے کہ تاحال قابض انتظامیہ نے کچھ نہیں بتایا کہ آیا اجازت نامہ واپس ملے گا یا نہیں۔

صیہونی انتظامیہ نے تمام کارروائی کی کوئی باقائدہ وجہ بھی نہیں بتائی البتہ اخبارات نے عالمی فوجداری عدالت کے دورے اور وہاں صیہونی جرائم سے متعلق موضوعات پراہم ملاقاتوں کو سبب لکھا ہے۔

واضح رہے کہ ریاض المالکی نے یورپ کے ایک ہفتہ طویل دورے کے دوران عالمی فوجداری عدالت کی وکیل فاطو بینسودا سے ملاقاتیں کی ہیں، جن میں ممکنہ طور پر قابض صیہونی انتظامیہ کے فلسطینیوں کے خلاف 2014 سے روا رکھے جانے والے جرائم پر مقدمہ چلانے کے حوالے سے گفتگو ہوئی۔

فلسطینی وزیر خارجہ کے دفتر نے فوجداری عدالت کی وکیل سے ملاقات کے حوالے میڈیا کو بتایا ہے کہ ملاقاتوں میں فلسطینی علاقوں میں قابض صیہونی افواج کی جانب سے روا رکھے گئے مظالم اور جرائم کی تحقیقات کی اہمیت پر بات ہوئی اور انصاف دلانے سے فلسطینیوں کے عالمی نظام پر پیدا ہونے والے اعتماد پر بھی گفتگو ہوئی۔

واضح رہے کہ عالمی فوجداری عدالت نے گزشتہ جمعہ فلسطینی اور قابض صیہونی انتظامیہ کو عدالت میں پیش ہونے کے نوٹس بھی بھیج دیے ہیں اور دونوں اطراف کو جنگی جرائم پر تحقیقات کرنے کا حکم دیا ہے۔

عالمی عدالت کے فیصلے کو فلسطینی حکام نے خوش آئند قرار دیا ہے تاہم قابض صیہونی انتظامیہ اس پر بہت سیخ پا ہے۔ قابض انتظامیہ کے سربراہ نیتن یاہو نے معاملے کو یہودیوں سے نفرت اور منافقت کی بہترین مثال قرار دیا ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us