اتوار, اکتوبر 17 Live
Shadow
سرخیاں
آؤکس بین الاقوامی سیاست میں کشیدگی و عدم استحکام بڑھانے اور اسلحے کی نئی دوڑ کا باعث ہو گا: چین اور مشرقی ممالک کے خلاف مغرب کے نئے عسکری اتحاد پر روسی ردعملایف بی آئی نے خفیہ کارروائی میں جوہری آبدوز ٹیکنالوجی بیچتے دو فوجی انجینئر گرفتار کر لیےامریکہ مصنوعی ذہانت، سائبر سکیورٹی اور دیگر جدید ٹیکنالوجیوں میں چین سے 15/20 سال پیچھے ہے: پینٹاگون سافٹ ویئر شعبے کے حال ہی میں مستعفی ہونے والے سربراہ کا تہلکہ خیز انٹرویوروسی محققین کووڈ-19 کے خلاف دوا دریافت کرنے میں کامیاب: انسانوں پر تجربات شروعسابق افغان وزیردفاع کے بیٹے کی امریکہ میں 2 کروڑ ڈالر کے بنگلے کی خریداری: ذرائع ابلاغ پر خوب تنقیدہمارے پاس ثبوت ہیں کہ فرانسیسی فوج ہمارے ملک میں دہشت گردوں کو تربیت دے رہی ہے: مالی کے وزیراعظم مائیگا کا رشیا ٹوڈے کو انٹرویوعالمی قرضہ 300کھرب ڈالر کی حدود پار کر کے دنیا کی مجموعی پیداوار سے بھی 3 گناء زائد ہو گیا: معروف معاشی تحقیقی ادارے کی رپورٹ میں تنبیہامریکہ میں رواں برس کورونا وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 2020 سے بھی بڑھ گئی: لبرل امریکی میڈیا کی خاموشی پر شہری نالاں، ریپبلک کا متعصب میڈیا مہم پر سوالکورونا ویکسین بیچنے والی امریکی کمپنی کے بانیوں اور سرمایہ کار کا نام امریکہ کے 225 ارب پتیوں کی فہرست میں شامل: سماجی حلقوں کی جانب سے کڑی تنقیدامریکی جاسوس ادارے سی آئی اے کو دنیا بھر میں ایجنٹوں کی شدید کمی کا سامنا، ایجنٹ مارے جانے، پکڑے جانے، ڈبل ایجنٹ بننے، لاپتہ ہونے کے باعث مسائل درپیش، اسٹیشنوں کو بھرتیاں تیز کرنے کا بھی حکم: نیو یارک ٹائمز

آسٹریلوی پارلیمنٹ یا جنسی تسکین کا اڈہ؟ نئے ویڈیو سکینڈل نے حکومت ہلا دی، عوامی غم وغصہ عروج پر، ارکان کا واقعات میں ملوث عملے کو برطرف کرنے کا مطالبہ

آسٹریلوی حکومت اہم عہدوں پر تعینات اہلکاروں اور سیاستدانوں کے جنسی سکینڈلوں سے بری طرح ہل گئی ہے۔ جاری لہر میں پارلیمنٹ میں جنسی عمل کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد عوامی غم و غصے میں مزید اضافہ ہو گیا ہے۔ ویڈیو سکینڈل میں سامنے آیا ہے کہ ملکی پارلیمنٹ کے اندر کام کرنے والا اہم عملہ نہ صرف عمارت کے اندر ہی جنسی عمل کو معمول بنائے ہوئے ہے بلکہ اسکی فلمیں بنا کر آپس میں ایک دوسرے کو بھی بھیجتا رہتا ہے۔

آسٹریلوی میڈیا کے مطابق انہیں اندر کے ایک بندے نے درجنوں ایسی ویڈیو اور تصاویر دی ہیں جن میں عہدے دار نہ صرف آپس میں جنسی عمل کرتے دیکھے جا سکتے ہیں بلکہ خواتین و مرد باہر سے جسم فروش مردوں اور عورتوں کو بھی پارلیمنٹ میں لا کر جنسی تسکین حاصل کرتے ہیں۔

ویڈیو دینے والے شخص نے خود بھی پارلیمنٹ میں جنسی عمل کا اعتراف کیا ہے اور میڈیا سے گفتگو میں کہا ہے کہ اس کے ویڈیو سامنے لانے کا مقصد اس عمل کو روکنا ہے، اسکے خیال میں بہت ہو گیا، عوام میں تقدس کی حامل اس عمارت کو جنسی عمل کے لیے استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ اسکا کہنا ہے کہ اسکے خیال میں پارلیمنٹ کی عمارت میں موجود عبادت کے کمرے کو عبادت کی نسبت جنسی عمل کے لیے زیادہ استعمال کیا گیا ہو گا۔

ویڈیو سامنے لانے والے بندے کا کہنا ہے کہ اس کے پاس ایسی درجنوں ویڈیو اور تصاویر ہیں، تاہم میڈیا نے تاحال صرف 1 کو دھندلا کر کے نشر کیا ہے۔

ویڈیو سکینڈل کے سامنے آنے کے بعد عوام کے ساتھ ساتھ اعلیٰ حکام کی جانب سے بھی شدید ناراضگی کا اظہار سامنے آیا ہے، اور متعدد وزراء نے واقعات میں ملوث عملے کو برطرف کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وزیر معاشیات نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا ہے کہ پارلیمنٹ کی عمارت میں جنسی عمل اس کی بےحرمتی کے مترادف ہے۔ ایک خاتون رکن پارلیمنٹ نے ردعمل میں کہا ہے کہ اس عمارت میں کام کے لیے آنے والے افراد کو گھٹیا نہیں ہونا چاہیے۔

کچھ ارکان نے پارلیمنٹ میں ایسے کسی عمل سے متعلق ناواقف ہونے کا دعویٰ بھی کیا ہے، تاہم مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ ملکی قانون کے مطابق تمام ارکان پارلیمنٹ اپنا عملہ خود بھرتی کرتے ہیں، اور عملہ تقریباً ہر وقت ان کے ساتھ مشغول ہوتا ہے لہٰذا یہ کیسے ممکن ہے کہ ارکان پارلیمنٹ اس سب سے آگاہ نہ ہوں؟

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us