Shadow
سرخیاں
مغربی طرز کی ترقی اور لبرل نظریے نے دنیا کو افراتفری، جنگوں اور بےامنی کے سوا کچھ نہیں دیا، رواں سال دنیا سے اس نظریے کا خاتمہ ہو جائے گا: ہنگری وزیراعظمامریکی جامعات میں صیہونی مظالم کے خلاف مظاہروں میں تیزی، سینکڑوں طلبہ، طالبات و پروفیسران جیل میں بندپولینڈ: یوکرینی گندم کی درآمد پر کسانوں کا احتجاج، سرحد بند کر دیخود کشی کے لیے آن لائن سہولت، بین الاقوامی نیٹ ورک ملوث، صرف برطانیہ میں 130 افراد کی موت، چشم کشا انکشافاتپوپ فرانسس کی یک صنف سماج کے نظریہ پر سخت تنقید، دور جدید کا بدترین نظریہ قرار دے دیاصدر ایردوعان کا اقوام متحدہ جنرل اسمبلی میں رنگ برنگے بینروں پر اعتراض، ہم جنس پرستی سے مشابہہ قرار دے دیا، معاملہ سیکرٹری جنرل کے سامنے اٹھانے کا عندیامغرب روس کو شکست دینے کے خبط میں مبتلا ہے، یہ ان کے خود کے لیے بھی خطرناک ہے: جنرل اسمبلی اجلاس میں سرگئی لاوروو کا خطاباروناچل پردیش: 3 کھلاڑی چین اور ہندوستان کے مابین متنازعہ علاقے کی سیاست کا نشانہ بن گئے، ایشیائی کھیلوں کے مقابلے میں شامل نہ ہو سکےایشیا میں امن و استحکام کے لیے چین کا ایک اور بڑا قدم: شام کے ساتھ تذویراتی تعلقات کا اعلانامریکی تاریخ کی سب سے بڑی خفیہ و حساس دستاویزات کی چوری: انوکھے طریقے پر ادارے سر پکڑ کر بیٹھ گئے

Tag: بنگلور، گستاخی رسول ﷺ، ہنگامے، مندر کی حفاظت، ہندوستانی مسلمان، سری وہناس،

ہندوستان: سیاستدان کے بھتیجے کی جانب سے گستاخی رسولﷺ، مسلمانوں کے احتجاج پر ہنگامے پھوٹ پڑے

ہندوستان: سیاستدان کے بھتیجے کی جانب سے گستاخی رسولﷺ، مسلمانوں کے احتجاج پر ہنگامے پھوٹ پڑے

عالمی
بھارتی شہر بنگلورو سے رکن کانگریس سری ویناس کے بھتیجے نے فیسبک پر توہین آمیز پوسٹ کی جس میں محمدﷺ کی شان میں گستاخی کی گئی تھی۔ مسلمانوں کی جانب سے اس عمل پر ناراضگی کا اظہار کیا گیا اور مظاہرہ بھی کیا گیا۔تاہم ایسے میں کچھ شر پسند عناصر نے سری ویناس کے گھر پر دھاوا بھول دیا اور اسے آگ لگا دی۔ جس سے فوراً علاقے میں ہنگامے پھوٹ پڑے جس میں اب تک 3 افراد کے ہلاک اور متعدد کے زخمی ہونے کی اطلاع ہے۔ https://twitter.com/keypadguerilla/status/1293398316072316930 پولیس کے مطابق ہنگاموں کے دوران 24 گاڑیوں اور تقریباً 200 موٹرسائیکلوں کو آگ لگائی گئی جب کہ پولیس نے مشتعل مظاہرین کو قابو کرنے کے لیے فائرنگ اور آنسو گیس کی شیلنگ کی جس سے تین افراد ہلاک ہوگئے۔ صورتحال کو بھانپتے ہوئے مسلمانوں کی جانب سے علاقے کے مندروں کی حفاظت کی گئی تاکہ انہیں شر پسند عناصر کو مزید بے امنی کا موقع نہ دیا...

Contact Us