جمعہ, فروری 23 https://www.rt.com/on-air/ Live
Shadow
سرخیاں
صدر ایردوعان کا اقوام متحدہ جنرل اسمبلی میں رنگ برنگے بینروں پر اعتراض، ہم جنس پرستی سے مشابہہ قرار دے دیا، معاملہ سیکرٹری جنرل کے سامنے اٹھانے کا عندیامغرب روس کو شکست دینے کے خبط میں مبتلا ہے، یہ ان کے خود کے لیے بھی خطرناک ہے: جنرل اسمبلی اجلاس میں سرگئی لاوروو کا خطاباروناچل پردیش: 3 کھلاڑی چین اور ہندوستان کے مابین متنازعہ علاقے کی سیاست کا نشانہ بن گئے، ایشیائی کھیلوں کے مقابلے میں شامل نہ ہو سکےایشیا میں امن و استحکام کے لیے چین کا ایک اور بڑا قدم: شام کے ساتھ تذویراتی تعلقات کا اعلانامریکی تاریخ کی سب سے بڑی خفیہ و حساس دستاویزات کی چوری: انوکھے طریقے پر ادارے سر پکڑ کر بیٹھ گئےیورپی کمیشن صدر نے دوسری جنگ عظیم میں جاپان پر جوہری حملے کا ذمہ دار روس کو قرار دے دیااگر خطے میں کوئی بھی ملک جوہری قوت بنتا ہے تو سعودیہ بھی مجبور ہو گا کہ جوہری ہتھیار حاصل کرے: محمد بن سلمانمغربی ممالک افریقہ کو غلاموں کی تجارت پر ہرجانہ ادا کریں: صدر گھانامغربی تہذیب دنیا میں اپنا اثر و رسوخ کھو چکی، زوال پتھر پہ لکیر ہے: امریکی ماہر سیاستعالمی قرضوں میں ریکارڈ اضافہ: دنیا، بنکوں اور مالیاتی اداروں کی 89 پدم روپے کی مقروض ہو گئی

ایک اور اسٹاک مارکیٹ کریش؟ نوبل انعام یافتہ ماہر معاشیات رابرٹ شلر کی عالمی معیشت میں منفی رجحانات کی پیش گوئی۔

نوبل انعام یافتہ رابرٹ شلر ، جس نے 2000 اور 2007 کے اسٹاک مارکیٹ میں ہونے والے حادثوں کی پیش گوئی کی تھی ، اس بار پھر پیش گوئی کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ اگرچہ آپ کی توقع ہے کہ محض قیمتیں کم ہورہی ہیں۔ لیکن منفی رجحانات ہر جگہ موجود ہیں ، جس میں اسٹاک ، بانڈز اور رہائش شامل ہیں۔

انہوں نے لاس اینجلس میں سرمایہ کاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ: ” بچ کر جانے کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ آپ کو بس ان حالات سے گزرنا ہی پڑے گا ۔ ییل یونیورسٹی میں معاشیات کے پروفیسر نے کہا کہ وہ “ہر جگہ شرح نمو میں کمی کو دیکھتے ہیں ،” انہوں نے مزید کہا کہ ” ایسی حالت میں جہاں آپ جانتے ہو کہ اس میں کمی واقع ہو رہی ہے آپ کو مل جاتا ہے … ،اور آپ نے ابھی بھی اپنےآپ کو کافی حد تک بچایا ہوا ہے۔ لیکن آپ کے پاس کوئی چارہ نہیں ہے۔

واضح رہے کہ یہ انتباہ 1929 سے لے کر1939تک اسٹاک مارکیٹ میں شدید مندی کے حادثے کی 90 ویں سالگرہ کے موقع پر سامنے آیا ہے جس کے نتیجے میں ، امریکہ اور باقی ممالک مغربی صنعتی دباؤ کا شکار ہو گئے تھے۔ یہ مغربی صنعتی دنیا کی تاریخ کی بدترین اور طویل ترین معاشی بدحالی تھی۔ شلر نے کہا کہ وہ اگلے 30 سالوں میں امریکی اسٹاک میں سالانہ اوسطاً 4.4 فیصد ریٹرن کی توقع کرتے ہیں۔ انہوں نے بانڈز پر بھی تشویش کا اظہار کیا ، جو سرمایہ کاری کے لیے اثاثہ جات کا سب سے اہم حصہ ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

6 + eight =

Contact Us