اتوار, April 10 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

فلسطین کا 1967 کے علاوہ کوئی بھی منصوبہ بےسود ہو گا: صدر ایردوعان کا اقوام متحدہ میں اظہارخیال

ترک صدر رجب طیب ایردوعان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں کہا ہے کہ مقبوضہ فلسطین میں صہیونی انتظامیہ اور اتحادی معاملات کو سنبھالنے کے بجائے مزید بگاڑ رہے ہیں۔

صدر ایردوعان کا کہنا تھا کہ مقبوضہ فلسطین پر صہیونی قبضہ انسانیت کا وہ زخم ہے جس سے مسلسل خون بہہ رہا ہے، صہیونی انتظامیہ مظلوم فلسطینیوں کے خلاف مظالم، تشدد اور خوف کی پالیسی اپنائے ہوئے ہے۔

عالمی ادارے سے خطاب میں انہوں نے امریکہ سمیت متعدد ممالک کی جانب سے بیت المقدس میں سفارتخانوں کو منتقل کرنے کی بھی مذمت کی۔

خطاب میں صدر ایردوعان کا کہنا تھا کہ صہیونی انتظامیہ اپنے معاونین کے مدد سے فلسطینیوں کی آزادیوں کو چھین رہی ہے۔

فلسطینی مسئلے کا حل خود مختار اور آزاد فلسطینی ریاست کے قیام میں ہے، فلسطینی ریاست کی سرحدیں 1967 کے نقشے کے مطابق ہونی چاہیے، جب فلسطین آج کی نسبت کئی گنا زیادہ بڑی ریاست تھی۔ اس کے علاقہ تمام منصوبے یک طرفہ، غیر منصفانہ اور نامواقف ہوں گے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us