اتوار, April 10 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

فرانس پر حملے اسکے نوآبادیاتی ماضی اور صدر کے بےحس بیانات کی وجہ سے ہوئے: امریکی نشریاتی ادارے کے تبصرے و تحریر پر مغربی انٹرنیٹ صارفین سیخ پا

امریکی نشریاتی ادارے ایسوسیئیٹڈ پریس کو فرانس کی سیاسی صورتحال پر تبصرہ مہنگا پڑ گیا اور اس پر مغربی صارفین نے اسے آڑے ہاتھوں لیا ہے۔ اے پر انٹرنیٹ صارفین کی تنقید اس قدر سخت تھی کہ ادارے کو اپنی ٹویٹ تلف کرنا پڑی۔

ایسوسیئیٹڈ پریس نے اپنی ٹویٹ میں لکھا تھا کہ “فرانس کو مسلم دنیا کی ناراضگی مول لینے کی کیا ضرورت تھی؟ اسکی بربریت سے بھرپور نوآبادیاتی تاریخ، سیکولر پالیسیاں، سخت رائے رکھنے والا صدر اور اسکے مسلمانوں کے دین کے بارے میں بے حس بیانات نے فرانس کو یہاں تک پہنچایا ہے۔” اے پی کے تبصرے کے ساتھ ایک تحریر بھی شامل تھی جس میں مسلمانوں کے فرانس کو تسلسل کے ساتھ نشانہ بنانے کی وجوہات بیان کی گئی تھیں۔

اے پی کے تبصرے پر رائے دہی کرتے ہوئے مغربی صارفین کا کہنا تھا کہ اے پی کی تحریر مسلمانوں کو مزید حملوں کا جواز دیتے ہوئے فرانسیسی شہریوں کی زندگی کو خطرے میں ڈال رہی ہے۔

کچھ صارفین نے کہا کہ اے پی معذرت خواہانہ انداز اپنا کر دہشت گرد حملوں کو جواز مہیا کر رہی ہے۔ سوشل میڈیا پر سخت تنقید کے باعث اے پی نے اپنی تحریر اور تبصرہ تلف کر دیے، پر چند ہی گھنٹوں میں اس پر دسیوں ہزار صارفین اپنی رائے دہی کر چکے تھے۔

کچھ ہی دیر میں اے پی نے تحریر سے کچھ الفاظ بدل کر اسے دوبارہ شائع کیا اور اپنے تبصرے کی وضاحت بھی دی، تاہم اس پر معافی مانگنے اور تحریر کو ویب سائٹ سے ہٹانے سے گریز کیا۔

اپنے تازہ تبصرے میں اے پی نے لکھا کہ بہت سے ممالک آزادی رائے کے چیمپیئن بنتے ہیں اور ایسے مواد کو شائع کرنے سے بھی گریز نہیں کرتے جو پیغمبر اسلام کی توہین پر مبنی ہوں، لیکن پھر بھی فرانس ہی کے خلاف اتنا سخت ردعمل کیوں ہے؟ ایسا شاید اسکے نوآبادیاتی ماضی، سیکولر پالیسیوں اور سخت بولنے والے صدر کی وجہ سے ہے۔

یعنی اپنے نئے پیغام میں اے پی نے مسلمانوں کو فرانس کے غصہ دلانے کے جملے سے گریز کیا ہے، تاہم ایک جوابی ٹویٹ میں اے پی نے مزید وضاحت میں کہا ہے کہ اس سے قبل کی گئی ٹویٹ میں ناراضگی مول لینے سے مراد فرانس کو ذمہ دار ٹھہرانہ نہیں تھا۔

وضاحت اور ٹویٹ میں تبصرے کو بدلنے کے باوجود انٹرنیٹ صارفین کی جانب سے اے پی پر لفاظی حملے جاری ہیں۔ اور اب فرانسیسی صارفین امریکی ادارے سے 11 ستمبر کے حملے کا جواز پوچھ رہے ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us