Shadow
سرخیاں
مغربی طرز کی ترقی اور لبرل نظریے نے دنیا کو افراتفری، جنگوں اور بےامنی کے سوا کچھ نہیں دیا، رواں سال دنیا سے اس نظریے کا خاتمہ ہو جائے گا: ہنگری وزیراعظمامریکی جامعات میں صیہونی مظالم کے خلاف مظاہروں میں تیزی، سینکڑوں طلبہ، طالبات و پروفیسران جیل میں بندپولینڈ: یوکرینی گندم کی درآمد پر کسانوں کا احتجاج، سرحد بند کر دیخود کشی کے لیے آن لائن سہولت، بین الاقوامی نیٹ ورک ملوث، صرف برطانیہ میں 130 افراد کی موت، چشم کشا انکشافاتپوپ فرانسس کی یک صنف سماج کے نظریہ پر سخت تنقید، دور جدید کا بدترین نظریہ قرار دے دیاصدر ایردوعان کا اقوام متحدہ جنرل اسمبلی میں رنگ برنگے بینروں پر اعتراض، ہم جنس پرستی سے مشابہہ قرار دے دیا، معاملہ سیکرٹری جنرل کے سامنے اٹھانے کا عندیامغرب روس کو شکست دینے کے خبط میں مبتلا ہے، یہ ان کے خود کے لیے بھی خطرناک ہے: جنرل اسمبلی اجلاس میں سرگئی لاوروو کا خطاباروناچل پردیش: 3 کھلاڑی چین اور ہندوستان کے مابین متنازعہ علاقے کی سیاست کا نشانہ بن گئے، ایشیائی کھیلوں کے مقابلے میں شامل نہ ہو سکےایشیا میں امن و استحکام کے لیے چین کا ایک اور بڑا قدم: شام کے ساتھ تذویراتی تعلقات کا اعلانامریکی تاریخ کی سب سے بڑی خفیہ و حساس دستاویزات کی چوری: انوکھے طریقے پر ادارے سر پکڑ کر بیٹھ گئے

امریکی انتخابات: جوبائیڈن کا میڈیا خبروں کی بنیاد پر فتح کا اعلان، صدر ٹرمپ کی جانب سے دعویٰ مسترد – کہا میڈیا اور ڈیموکریٹ کا اتحاد نہیں، قانونی ووٹ صدر کا انتخاب کریں گے

امریکی صدارتی انتخابات میں جوبائیڈن نے میڈیا رپورٹنگ کی بنیاد پر فتح کا دعویٰ کر دیا ہے جبکہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دعوے کو مسترد کرتے ہوئے قانونی چارہ جوئی کا اعلان کیا ہے۔ صدر ٹرمپ کا کہنا ہے کہ وہ حقیقی فاتح کو ہی امریکہ کا صدر بننے کی اجازت دیں گے۔

ایسوسیئیٹڈ پریس نے پنسلوینیا سے مبینہ فتح کی خبر دیتے ہوئے جوبائیڈن کو مطلوبہ 270 الیکٹورل ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب قرار دیا تھا جس پر حزب اختلاف کے امیدوار جو بائیڈن نے بھی فوری فتح کا اعلان کرتے ہوئے ٹویٹ میں کہا کہ وہ سب امریکیوں کے صدر ہوں گے، انکے بھی جنہوں نے انہیں ووٹ نہیں دیا۔

صورتحال پر اپنے ردعمل میں صدر ٹرمپ کا کہنا ہے کہ جو بائیڈن اپنے میڈیا اتحادیوں کی مدد سے فتح کا جھوٹا اعلان کر رہے ہیں۔ غیر قانونی ووٹوں اور میڈیا میں حاصل کی گئی اس فتح کو انکی قانونی ٹیم عدالت میں غلط ثابت کرے گی۔ صدر کا مزید کہنا تھا کہ قانونی ووٹ صدر کا انتخاب کرتے ہیں، نہ کہ ذرائع ابلاغ کی خبریں۔

امریکی صدر کی درخواست پر متعدد ریاستوں میں دوبارہ گنتی شروع ہو سکتی ہے۔ جن میں وسکونسن اور جارجیا زیادہ نمایاں ہیں جہاں جو بائیڈن کو بالترتیب محض 20 اور 7 ہزار ووٹوں کی برتری حاصل ہے۔ جبکہ پنسلوینیا میں بھی ڈاک ووٹوں پر پچھلی تاریخ ڈالنے کی تحقیقات ابھی جاری ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

eighteen − 18 =

Contact Us