ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

کاراباخ میں آزربائیجان آرمینیا جنگ:آزری صدر کا اہم تذویراتی شہر شوشا آزاد کروانے کا دعویٰ – آرمینیا کی تردید

آزربائیجان کی افواج نے بڑی کامیابی حاصل کرتے ہوئے کاراباخ کے اہم شہر شوشا کو آرمینیا کے قبضے سے آزاد کروا لیا ہے۔ صدر الہام علیو نے ٹویٹر پیغام میں شوشا کی خبر دی جس پر ملک بھر میں خوشی کا اظہار کیا گیا۔

صدر علیو نے لکھا کہ آج شوشا میں آزری جھنڈا لہرارہا ہے، اور یہ میری زندگی کا سب سے خوشی والا دن ہے، شوشا ہمارا ہے، کاراباخ آزربائیجان ہے۔

صدر کے پیغام کے فوری بعد وزیر دفاع نے اپنے پیغام میں کہا کہ آج 28 سال بعد شوشا کو آرمینیا سے آزادی مل گئی ہے۔ واضح رہے کہ شوشا کاراباخ کا دوسر ابڑ اشہر ہے اور اس کی تذویراتی اہمیت بھی بہت زیادہ ہے۔

دوسری طرف آرمینیا نے دعوے کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ شہر میں لڑائی تاحال جاری ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us