ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

سائبر دنیا میں جوہری دھماکہ، دنیا کی سب سے بڑی ڈیجیٹل ہجرت کا باعث، 9/11 کی طرز پر نئے دور کا پیش خیمہ: لبرل سماجی میڈیا کمپنیوں کی جانب سے صدر ٹرمپ کی آواز بندی پر روس سمیت عالمی رہنماؤں کا شدید ردعمل

روسی دفتر خارجہ کی ترجمان ماریہ زاخارووا نے ٹویٹر کی جانب سے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے کھاتے کو بند کرنے کے اقدام کو جمہوری روایات کے خلاف کڑا وار قرار دیا ہے۔ روسی عہدے دار کا کہنا تھا کہ ایک نجی کمپنی کی جانب سے ریاست کے سربراہ کی آواز کو بند کرنے کی روایت کے نتائج اچھے نہیں ہوں گے۔

ماریہ زاخاور کا کہنا تھا کہ واقعہ سائبر دنیا میں جوہری دھماکے کے برابر ہے، اس کے بہت دور رس نتائج برآمد ہوں گے۔

روسی عہدے دار کا مزید کہنا تھا کہ واقعہ دراصل مغربی سماج کی حقیقی عکاسی ہے، جو ہر وقت دنیا کو آزادی رائے کا پرچار کرتا ہے پر اپنے ممالک میں عمومی سماج سے لے کر سائبر دنیا میں بھی سخت سنسرشپ لاگو ہے۔ دنیا کی بڑی ابلاغی ٹیکنالوجی کمپنی نے ان آوازوں کو تقویت دی ہے جو سائبر دنیا کو منظم کرنے کے نام پر مخالف آوازوں کو دبانا چاہتے ہیں۔

سماجی میڈیا پر شائع تحریر پر روسی ترجمان کا کہنا تھا کہ ٹویٹر کے اقدام سے اب تک دنیا کی سب سے بڑی ڈیجیٹل ہجرت ہوئی ہے۔ امریکیوں کی بڑی تعداد نے روسی ابلاغی ٹیکنالوجی ایپ ٹیلی گرام کا رخ کیا ہے، لوگ فیس بک اور ٹویٹر کو تیزی سے چھوڑ رہے ہیں۔

ڈیجیٹل ہجرت پر ٹیلی گرام کے بانی پاول دوروو نے ایپل اور گوگل سٹور کے حوالے سے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں کمپنیاں مخالف نظریات کو جگہ دینے والی ایپلیکیشنوں پر پابندی لگا سکتی ہیں۔

روسی وزارت خارجہ کی ترجمان نے امریکی ذرائع ابلاغ سے متعلق نئے قوانین پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی قوانین اس وقت منتشر فیصلوں، لابیوں اور دھمکیوں کے شیطانی اتحاد کا ایک مجموعہ ہے۔

فیس بک اور ٹویٹر نے امریکی صدر پر اپنے ہی ملک میں بغاوت کے الزامات لگاتے ہوئے دنیا کے بہت سے ممالک کی حکومتوں کو پریشانی میں مبتلا کر دیا ہے۔

واضح رہے کہ جرمنی کی چانسلر اینجیلا میرکل بھی امریکی لبرل کمپنیوں کی جانب سے سربراہ مملکت کی آواز کو دبانے کے اقدام کو پریشان کن قرار دے چکی ہیں جبکہ یورپی کمیشن برائے مارکیٹ کے سربراہ تھیئری بریٹن نے اقدام کا موازنہ 9/11 سے کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ واقع بھی ایک نئے دور کے آغاز کا پیش خیمہ ہو گا، جس میں نجی اور غیر منظم کمپنیاں جمہوریت کے لیے خطرہ بن جائیں گی۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us