اتوار, اکتوبر 17 Live
Shadow
سرخیاں
آؤکس بین الاقوامی سیاست میں کشیدگی و عدم استحکام بڑھانے اور اسلحے کی نئی دوڑ کا باعث ہو گا: چین اور مشرقی ممالک کے خلاف مغرب کے نئے عسکری اتحاد پر روسی ردعملایف بی آئی نے خفیہ کارروائی میں جوہری آبدوز ٹیکنالوجی بیچتے دو فوجی انجینئر گرفتار کر لیےامریکہ مصنوعی ذہانت، سائبر سکیورٹی اور دیگر جدید ٹیکنالوجیوں میں چین سے 15/20 سال پیچھے ہے: پینٹاگون سافٹ ویئر شعبے کے حال ہی میں مستعفی ہونے والے سربراہ کا تہلکہ خیز انٹرویوروسی محققین کووڈ-19 کے خلاف دوا دریافت کرنے میں کامیاب: انسانوں پر تجربات شروعسابق افغان وزیردفاع کے بیٹے کی امریکہ میں 2 کروڑ ڈالر کے بنگلے کی خریداری: ذرائع ابلاغ پر خوب تنقیدہمارے پاس ثبوت ہیں کہ فرانسیسی فوج ہمارے ملک میں دہشت گردوں کو تربیت دے رہی ہے: مالی کے وزیراعظم مائیگا کا رشیا ٹوڈے کو انٹرویوعالمی قرضہ 300کھرب ڈالر کی حدود پار کر کے دنیا کی مجموعی پیداوار سے بھی 3 گناء زائد ہو گیا: معروف معاشی تحقیقی ادارے کی رپورٹ میں تنبیہامریکہ میں رواں برس کورونا وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 2020 سے بھی بڑھ گئی: لبرل امریکی میڈیا کی خاموشی پر شہری نالاں، ریپبلک کا متعصب میڈیا مہم پر سوالکورونا ویکسین بیچنے والی امریکی کمپنی کے بانیوں اور سرمایہ کار کا نام امریکہ کے 225 ارب پتیوں کی فہرست میں شامل: سماجی حلقوں کی جانب سے کڑی تنقیدامریکی جاسوس ادارے سی آئی اے کو دنیا بھر میں ایجنٹوں کی شدید کمی کا سامنا، ایجنٹ مارے جانے، پکڑے جانے، ڈبل ایجنٹ بننے، لاپتہ ہونے کے باعث مسائل درپیش، اسٹیشنوں کو بھرتیاں تیز کرنے کا بھی حکم: نیو یارک ٹائمز

سکاٹ لینڈ میں خودمختاری کی تحریک زور پکڑنے لگی، نمائندہ وزیر نیکولا سٹرجن نے رواں سال انتخابات جیت کر ریفرنڈم کا اعلان کر دیا

برطانیہ میں سکاٹ لینڈ کی نمائندہ وزیر نیکولا سٹرجن نے سکاٹ لینڈ کی خودمختاری کے لیے ایک بار پھر ریفرنڈم کے اسرار کو دوہرایا ہے اور کہا ہے کہ انکی جماعت مئی میں عام انتخابات جیت کر خودمختاری کے فیصلے کے لیے عوام کے پاس جائے گی، جبکہ برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے زور دیا ہے کہ آئندہ ریفرنڈم 2055 سے قبل نہیں ہونا چاہیے۔

نیکولا سٹرجننے بی بی سی سے گفتگو میں وزیراعظم کو ڈرپوک چوہا قرار دیتے ہوئے کہا بورس جانسن جمہوریت سے ڈرتے ہیں، اس لیے عوامی رائے کو نظرانداز کرتے ہوئے کم از کم 50 سال کا وقت مانگ رہے ہیں۔

یاد رہے کہ سکاٹ لینڈ میں خودمختاری/علیحدگی کے لیے 2014 میں ریفرنڈم ہوا تھا جس میں 55 فیصد شہریوں نے علیحدگی کو ناپسند کیا تھا تاہم یورپی اتحاد سے الگ ہونے کے بعد سکاٹ لینڈ میں علیحدگی کی تحریک زور پکڑ گئی ہے۔ اور عوامی سروے میں بھی علیحدگی کے حامیوں میں اضافے کے اشارے ملے ہیں۔

سکاٹش نیشنل پارٹی نے اپنے منشور میں بھی خودمختاری کو نمایاں اہمیت دیتے ہوئے اسکے لیے مکمل لائحہ عمل ترتیب دے دیا ہے۔ اور 2021 میں انتخابات جیت کر تحریک میں نئے سرے سے چلانا چاہتی ہے۔ جماعت کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ ریفرنڈم کی راہ میں کوئی قانونی رکاوٹ نہیں ہے، تاہم مرکزی حکومت وباء کے ختم ہونے تک انتظار کی درخواست کر رہی ہے۔ تاہم سکاٹ لینڈ کے سیاسی رہنما اسے قانونی و اخلاقی جواز کی نفی قرار دے رہے ہیں۔

سکاٹس نیشنل پارٹی کا کہنا ہے کہ سکاٹ لینڈ ایکٹ 1988 کی شق نمبر 30 مقامی آئینی حکومت کو جزوی یا مستقل قانونی سازی کا اختیار دیتی ہے، اور اس کے لیے اسے برطانوی اجازت یا توثیق کی ضرورت بھی نہیں ہے۔

دوسری طرف بورس جانسن سکاٹ لینڈ کی مہم کو روکنے کے لیے پانچ نکاتی ایجنڈا لا رہے ہیں، جس کی مدد سے وہ خودمختاری کے خلاف مہم چلائیں گے۔ وزیراعظم کا کہنا ہے کہ ریفرنڈم کسی بھی قوم کے لیے کوئی کھیل تماشا نہیں ہوتے، اور یہ ایک نسل میں ایک بار ہی ہونا چاہیے، سکاٹ لینڈ کی علیحدگی پسند جماعت کے پاس قابل عمل اکثریت نہیں ہے، لہٰذا انہیں پہلے اس پر کام کرنا چاہیے اور آئندہ نسل میں دوبارہ ریفرنڈم کے لیے کوشش کرنی چاہیے۔

بورس جانسن نے مزید کہا کہ برطانیہ نے یورپی اتحاد سے نکلنے کے لیے ریفرنڈم 36 سال کے بعد کیا، اس سے قبل 1975 میں ریفرنڈم ہوا ہے ، اور دوبارہ 2016 میں، سکاٹ لینڈ کو بھی سمجھداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے سیاسی مہمات چلانی چاہیے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us