ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

ایران کے یورینیم کی افزودگی روکنے تک معاشی پابندیاں نہیں ہٹائیں گے: صدر بائیڈن

امریکی صدر جوبائیڈن نے ایران پر سے معاشی پابندیاں ہٹانے کے امکان کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس پر تب تک بات نہیں ہو سکتی جب تک ایران یورینیم کی افزودگی کو روک نہ دے۔

ایک ٹی وی انٹرویو میں صدر جوبائیڈن سے پوچھا گیا کہ کیا ایران کے مطالبے کے مطابق امریکہ بات چیت شروع کرنے کے لیے معاشی پابندیاں اٹھا رہا ہے، جس پر صدر بائیڈن نے ایک لفظ میں کہا کہ نہیں، ایران کو یورینیم کی افزودگی پہلے روکنا ہو گی۔

یوں امریکی صدر اور ایرانی اعلیٰ قیادت خصوصاً آیت اللہ علی خامنائی کی رائے بالکل ایک دوسرے کے متضاد کھڑی ہو گئی ہے۔ ایرانی سپریم لیڈرنے کچھ دن قبل کہا تھا کہ امریکہ کو بات چیت شروع کرنے کے لیے معاشی پابندیاں ہٹانا ہوں گی، ایران خود بخود جوہری معاہدے میں قبول کردہ شرائط پر واپس آجائے گا۔

یاد رہے کہ 2018 میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے ساتھ کیے صدر اوباما جوہری معاہدے کو پاسداری نہ کرنے کا الزام لگاتے ہوئے ختم کر دیا تھا، اور معاہدہ توڑنے پر معاشی پابندیاں بھی لگا دی تھیں، اب صدر بائیڈن کا کہنا ہے کہ وہ واپس معاہدے میں آنا تو چاہتے ہیں لیکن ایرانی مؤقف کی سختی اس میں مشکلات پیدا کر رہی ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us