منگل, دسمبر 7 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

فیس بک، وٹس ایپ اور دیگر امریکی ابلاغی ٹیکنالوجی کمپنیوں کا متعصب اور غیرجمہوری رویہ: ٹیلیگرام 2021 کے پہلے ماہ میں سب سے زیادہ ڈاؤنلوڈ کی گئی ایپلیکیشن بن گئی

رابطے کے لیے معروف ایپلیکیشن ٹیلیگرام کو جنوری 2021 میں سب سے زیادہ ڈاؤنلوڈ کیا گیا۔ ایپلیکیشن کے بانی پاول دوروو کا کہنا ہے کہ کا ماہ کے دوران ٹیلیگرام کے صارفین میں 40 فیصد کا ریکارڈ اضافہ ہوا اور بہت سے صارفین نے وٹس ایپ، ٹویٹر کو ترک کرتے ہوئے ٹیلیگرام کا استعمال شروع کیا ہے۔

ٹیلی گرام چینل پر دوروو کا مزید کہنا تھا کہ گزشتہ ساڈھے سات سالوں میں ہم مسلسل صارفین کی معلومات کے تحفظ کو پہلی ترجیح بنائے ہوئے ہیں، ٹیلیگرام سب سے زیادہ محفوظ خدمات فراہم کرنے والی ایپلیکیشن ہے اور ہم ایپلیکیشن میں مزید بہتری بھی لاتے رہتے ہیں۔ ٹیلیگرام ہرشعبے کے صارف کے لیے بہترین انتخاب ہے۔

واضح رہے کہ مغربی ممالک میں بھی ٹیلیگرام کی مقبولیت میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔ جس کی وجہ معروف ایپلیکیشنوں وٹس ایپ، فیس بک، ٹویٹر کا سیاسی تعصب بن رہا ہے۔ صارفین بڑی ابلاغی کمپنیوں کے رویے کو جمہوری روایات کے خلاف قرار دے رہے ہیں اور گزشتہ امریکی انتخابات میں واضح طرفداری پر بھی نالاں ہیں۔

اس کے علاوہ کمپنیوں کی جانب سے صارفین کی معلومات اور ڈیٹا سے متعلق اپنائی جانے والی نئی پالیسیاں بھی شہریوں کی ناراضگی کی باعث بن رہی ہیں۔ فیس بک کا متعدد دیگر کمپنیوں کو خرید کر ان کے صارفین کے ڈیٹا کو بھی کمرشل مقاصد کے لیے استعمال کرنے کی پالیسی نے صارفین میں اجارہ داری کے خوف کو بڑھایا ہے اور دنیا بھر میں لوگ دیگر ایپلیکیشنوں کا رخ کر رہے ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us