ہفتہ, جنوری 15 Live
Shadow
سرخیاں
قازقستان ہنگامے: مشترکہ تحفظ تنظیم کے سربراہ کا صورتحال پر قابو کا اعلان، امن منصوبے کی تفصیلات پیش کر دیںبرطانوی پارلیمنٹ میں منشیات کا استعمال: اسپیکر کا سونگھنے والے کتے بھرتی کرنے کا عندیاامریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟

ایس-400 خریدنے کا فیصلہ ایک رات میں نہیں کیا تھا، امریکہ معاملے کو سمجھے: ترجمان ترک صدر ابراہیم کلن

ترک صدر کے ترجمان ابراہم کلن نے واضح کیا ہے کہ امریکی معاشی پابندیوں کے خوف میں ترکی روس سے خریدا ہوا فضائی دفاعی نظام ترک نہیں کرے گا، البتہ نیٹو اتحادیوں کے ساتھ بات چیت سے مسائل اور اعتراضات کو دور کیا جا سکتا ہے۔

قومی ٹی وی ت ر ت سے گفتگو میں ابراہیم کلن کا مزید کہنا تھا کہ امریکہ کو سمجھنا چاہیے کہ ترکی نے ایس-400 لینے کا فیصلہ ایک رات میں نہیں کیا، اس فیصلے کی ذمہ داری سابق امریکی صدر پر بھی آتی ہے، صدر کے ترجمان کا مزید کہنا تھا کہ صدر بائیڈن کے قومی سلامتی کے مشیر جیک سولیوان سے گزشتہ ہفتے فون پر گفتگو کے دوران ایس-400 پر بھی بات ہوئی اور آئندہ کچھ روز میں دوبارہ اس مسئلے پر بات ہو گی۔

واضح رہے کہ ترکی کے روس سے ایس-400 دفاعی نظام خریدنے پر امریکہ سخت ناراض ہے، امریکی مؤقف ہے کہ ایس-400 خرید کر ترکی نے نیٹو اتحاد کے مخالف عسکری گروہ کے ساتھ تعلقات استوار کیے ہیں، جو عسکری اتحاد کی روایت کے خلاف ہے۔ یہی وجہ تھی کہ امریکہ نے ترکی کو ایف35 لڑاکا طیارے کے منصوبے سے ہٹا دیا تھا۔ اس کے علاوہ صر ٹرمپ نے ترکی پر معاشی پابندیاں بھی لگا دی تھیں۔

امریکہ میں انتظامیہ بدلنے کے بعد دنیا بھر میں اس کے تعلقات میں تبدیلی کی امید کی جا رہی ہے تاہم ترکی کے ساتھ جاری کشیدگی میں کمی کا امکان نہیں ہے، کیونکہ صدر بائیڈن نے بھی ایس-400 پر وہی مؤقف اپنایا ہے جو صدر ٹرمپ کا رہا ہے۔

تاہم ابراہیم کلن پرامید ہیں کہ ترک صدر ایردوعان، صدر بائیڈن سے ملاقات میں انہیں رام کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے، جو آئندہ چند ہفتوں میں متوقع ہے۔

ترک صدر کے ترجمان نے میڈیا سے گفتگو میں مزید کہا کہ ہمیں احساس ہے کہ ایس-400 کو لے کر نیٹو کے ساتھ کسی بات پر متفق ہونا مشکل ہے، لیکن امریکہ اور اتحادیوں کا بات چیت پر راضی ہونا اس کا اشارہ ہے کہ اتحادی ترکی کے ساتھ تعلقات کو کتنی اہمیت دیتے ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us