جمعرات, اکتوبر 28 Live
Shadow
سرخیاں
جمناسٹک عالمی چیمپین مقابلے میں روسی کھلاڑی دینا آویرینا نے 15ویں بار سونے کا تمغہ جیت کر نیا عالمی ریکارڈ بنا دیا، بہن ارینا دوسرے نمبر پر – ویڈیویورپی یونین ہمارے سر پر بندوق نہ تانے، رویہ نہ بدلا تو بریگزٹ کی طرز پر پولیگزٹ ہو گا: پولینڈ وزیراعظمسابق سعودی جاسوس اہلکار سعد الجبری کا تہلکہ خیز انٹرویو: سعودی شہزادے محمد بن سلمان پر قتل کے منصوبے کا الزام، شہزادے کو بے رحم نفسیاتی مریض قرار دے دیاملکی سیاست میں مداخلت پر ترکی کا سخت ردعمل: 10 مغربی ممالک نے مداخلت سے اجتناب کا وضاحتی بیان جاری کر دیا، ترک صدر نے سفراء کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ واپس لے لیاترکی کو ایف-35 منصوبے سے نکالنے اور رقم کی تلافی کے لیے نیٹو کی جانب سے ایف-16 طیاروں کو جدید بنانے کی پیشکش: وزیر دفاع کا تکنیکی کام شروع ہونے کا دعویٰ، امریکہ کا تبصرے سے انکارترک صدر ایردوعان کا اندرونی سیاست میں مداخلت پر 10 مغربی ممالک کے سفراء کو ناپسندیدہ قرار دینے کا فیصلہبحرالکاہل میں چینی و روسی جنگی بحری مشقیں مکمل – ویڈیونائجیریا: جیل حملے میں 800 قیدی فرار، 262 واپس گرفتار، 575 تاحال مفرورترکی: فسلطینی طلباء کی جاسوسی کرنے والا 15 رکنی صیہونی جاسوس گروہ گرفتار، تحقیقات جاریامریکی انتخابات میں غیر سرکاری تنظیموں کے اثرانداز ہونے کا انکشاف: فیس بک کے مالک اور دیگر ہم فکر افراد نے صرف 2 تنظیموں کو 42 کروڑ ڈالر کی خطیر رقم چندے میں دی، جس سے انتخابی عمل متاثر ہوا، تجزیاتی رپورٹ

لندن: صادق خان دوبارہ برطانوی دارالحکومت کے ناظم اعلیٰ مقرر

جرائم اور کووڈ تالہ بندی سے شدید متاثر برطانوی دارالحکومت لندن کے بلدیاتی انتخابات میں ایک بار پھر صادق خان ناظم اعلیٰ منتخب ہو گئے ہیں۔ توقع کے خلاف کامیابی نے لیبر پارٹی کو بڑی ہزیمت سے بچاتے ہوئے فتح کا جشن منانے کا موقع فراہم دیا ہے۔

کل ہوئے بلدیاتی انتخابات میں صادق خان نے 55.2٪ ووٹ حاصل کرکے فتح حاصل کی ہے، کنزرویٹوکے شاون بیلی صرف 44.8 فیصد ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

فتح کی خبر ملتے ہی صادق خان نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ ” لندن کے شہریوں نے مجھ پر ایک بار پھر اعتماد کا اظہار کیا ہے، میں اس پر انکا ممنون ہوں، میں وبائی بیماری کے تاریک دنوں کے بعد لندن کے لیے ایک بہتر اور روشن مستقبل کی تعمیر میں اور ایک سرسبز، خوبصورت اور محفوظ شہر بنانے میں کردار ادا کرنے کے لئے ہر طرح کی کوشش کا وعدہ کرتا ہوں، جہاں تمام لندن والوں کو اپنی صلاحیتوں کے عین مطابق اپنے خوابوں کی تکمیل کے مواقع میسر ہوں گے”۔

اپنے خطاب میں ناظم اعلیٰ لندن نے مزید کہا کہ بریکزٹ کے اثرات ابھی جاری ہیں، ہمیں بعد ازتقسیم حالات میں کمزوریوں کو ٹھیک کرنے کے لیے بھرپور کام کرنے کی ضرورت ہے۔

سماجی حلقوں کا کہنا ہے کہ لندن میں بڑھتے ہوئے جرائم، جن میں چاقو سے بڑھتے حملے بلدیاتی انتظامیہ کے لیے بڑا مسئلہ بن گئے ہیں، گزشتہ کچھ عرصے میں 12 نوجوانوں کی ایسے ہی حملوں میں موت ہوئی ہے۔

یورپ میں بڑھتے اسلاموفوبیا کے باوجود ایک اہم یورپی دارالحکومت میں ایک مسلمان اور ایشیائی نسل کا دوسری بار ناظم اعلیٰ منتخب ہونا بڑی اہمیت کا حامل ہے اور یورپی سیاسی حلقوں خصوصاً نسل پرست جماعتوں کی جانب سے اس پر چہہ مگوئیاں شروع ہو گئی ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us