ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

لندن: صادق خان دوبارہ برطانوی دارالحکومت کے ناظم اعلیٰ مقرر

جرائم اور کووڈ تالہ بندی سے شدید متاثر برطانوی دارالحکومت لندن کے بلدیاتی انتخابات میں ایک بار پھر صادق خان ناظم اعلیٰ منتخب ہو گئے ہیں۔ توقع کے خلاف کامیابی نے لیبر پارٹی کو بڑی ہزیمت سے بچاتے ہوئے فتح کا جشن منانے کا موقع فراہم دیا ہے۔

کل ہوئے بلدیاتی انتخابات میں صادق خان نے 55.2٪ ووٹ حاصل کرکے فتح حاصل کی ہے، کنزرویٹوکے شاون بیلی صرف 44.8 فیصد ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

فتح کی خبر ملتے ہی صادق خان نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ ” لندن کے شہریوں نے مجھ پر ایک بار پھر اعتماد کا اظہار کیا ہے، میں اس پر انکا ممنون ہوں، میں وبائی بیماری کے تاریک دنوں کے بعد لندن کے لیے ایک بہتر اور روشن مستقبل کی تعمیر میں اور ایک سرسبز، خوبصورت اور محفوظ شہر بنانے میں کردار ادا کرنے کے لئے ہر طرح کی کوشش کا وعدہ کرتا ہوں، جہاں تمام لندن والوں کو اپنی صلاحیتوں کے عین مطابق اپنے خوابوں کی تکمیل کے مواقع میسر ہوں گے”۔

اپنے خطاب میں ناظم اعلیٰ لندن نے مزید کہا کہ بریکزٹ کے اثرات ابھی جاری ہیں، ہمیں بعد ازتقسیم حالات میں کمزوریوں کو ٹھیک کرنے کے لیے بھرپور کام کرنے کی ضرورت ہے۔

سماجی حلقوں کا کہنا ہے کہ لندن میں بڑھتے ہوئے جرائم، جن میں چاقو سے بڑھتے حملے بلدیاتی انتظامیہ کے لیے بڑا مسئلہ بن گئے ہیں، گزشتہ کچھ عرصے میں 12 نوجوانوں کی ایسے ہی حملوں میں موت ہوئی ہے۔

یورپ میں بڑھتے اسلاموفوبیا کے باوجود ایک اہم یورپی دارالحکومت میں ایک مسلمان اور ایشیائی نسل کا دوسری بار ناظم اعلیٰ منتخب ہونا بڑی اہمیت کا حامل ہے اور یورپی سیاسی حلقوں خصوصاً نسل پرست جماعتوں کی جانب سے اس پر چہہ مگوئیاں شروع ہو گئی ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us