پیر, دسمبر 6 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

برطانیہ مزید حیلے بہانے تراشنا بند کرے اور سن 71 سے تعطل کی شکار 40 کروڑ پاؤنڈ کی خطیر رقم واپس کرے: ایرانی وزیر خارجہ

ایرانی وزیر خارجہ سعید خطیب زادے نے برطانیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ 1971 سے تعطل کی شکار اسکی 40 کروڑ پاؤنڈ کی خطیر رقم واپس کی جائے۔ ایران نے سن 71 میں برطانیہ سے 1500 چیف ٹین ٹینک خریدنے کا معاہدہ کیا تھا تاہم برطانوی نواز شاہ رضا پہلوی کی حکومت کے گرتے ہی برطانیہ نے ٹینک مہیا کرنے سے انکار کر دیا، اور اس کے لیے ادا رقم بھی واپس نہ کی۔

ایرانی وزیر خارجہ نے میڈیا سے گفتگو میں کہا ہے کہ نائب وزیر خارجہ علی باگری قانی نے دورہ لندن کے دوران برطانوی اعلیٰ عہدے داروں کے سامنے معاملے کو اٹھایا ہے اور رقم کی فوری ادائیگی کا مطالبہ کیا ہے۔ انکا کہنا تھا کہ برطانیہ کو مزید حیلے بہانے تراشنے کے بجائے ایرانی قوم کی رقم واپس کردینی چاہیے۔

ایک طرف ایرانی حکومت نے 40 سال سے لٹکی رقم کی فوری واپسی کا مطالبہ کیا ہے جبکہ برطانوی سیاستدان ادائیگی کو ایران میں قید دوہری شہریت کے حامل برطانوی شہریوں کی حوالگی سے مشروط کرنے کی تجویز سامنے لے آئے ہیں۔

ایرانی سیاسی رہنما معاملے پر منقسم نظر آتے ہیں انکا کہنا ہے کہ شرط برطانیہ کی جانب سے ملک میں سیاسی مداخلت کے مترادف ہے جبکہ کچھ قیدیوں کی حوالگی کی شرط پر بھی متفق ہیں، انکا ماننا ہے کہ ملک کو لاحق معاشی بحران سے نکالنے کے لیے ہر حال میں رقم واپس لینی چاہیے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us