Shadow
سرخیاں
مغربی طرز کی ترقی اور لبرل نظریے نے دنیا کو افراتفری، جنگوں اور بےامنی کے سوا کچھ نہیں دیا، رواں سال دنیا سے اس نظریے کا خاتمہ ہو جائے گا: ہنگری وزیراعظمامریکی جامعات میں صیہونی مظالم کے خلاف مظاہروں میں تیزی، سینکڑوں طلبہ، طالبات و پروفیسران جیل میں بندپولینڈ: یوکرینی گندم کی درآمد پر کسانوں کا احتجاج، سرحد بند کر دیخود کشی کے لیے آن لائن سہولت، بین الاقوامی نیٹ ورک ملوث، صرف برطانیہ میں 130 افراد کی موت، چشم کشا انکشافاتپوپ فرانسس کی یک صنف سماج کے نظریہ پر سخت تنقید، دور جدید کا بدترین نظریہ قرار دے دیاصدر ایردوعان کا اقوام متحدہ جنرل اسمبلی میں رنگ برنگے بینروں پر اعتراض، ہم جنس پرستی سے مشابہہ قرار دے دیا، معاملہ سیکرٹری جنرل کے سامنے اٹھانے کا عندیامغرب روس کو شکست دینے کے خبط میں مبتلا ہے، یہ ان کے خود کے لیے بھی خطرناک ہے: جنرل اسمبلی اجلاس میں سرگئی لاوروو کا خطاباروناچل پردیش: 3 کھلاڑی چین اور ہندوستان کے مابین متنازعہ علاقے کی سیاست کا نشانہ بن گئے، ایشیائی کھیلوں کے مقابلے میں شامل نہ ہو سکےایشیا میں امن و استحکام کے لیے چین کا ایک اور بڑا قدم: شام کے ساتھ تذویراتی تعلقات کا اعلانامریکی تاریخ کی سب سے بڑی خفیہ و حساس دستاویزات کی چوری: انوکھے طریقے پر ادارے سر پکڑ کر بیٹھ گئے

برطانیہ مزید حیلے بہانے تراشنا بند کرے اور سن 71 سے تعطل کی شکار 40 کروڑ پاؤنڈ کی خطیر رقم واپس کرے: ایرانی وزیر خارجہ

ایرانی وزیر خارجہ سعید خطیب زادے نے برطانیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ 1971 سے تعطل کی شکار اسکی 40 کروڑ پاؤنڈ کی خطیر رقم واپس کی جائے۔ ایران نے سن 71 میں برطانیہ سے 1500 چیف ٹین ٹینک خریدنے کا معاہدہ کیا تھا تاہم برطانوی نواز شاہ رضا پہلوی کی حکومت کے گرتے ہی برطانیہ نے ٹینک مہیا کرنے سے انکار کر دیا، اور اس کے لیے ادا رقم بھی واپس نہ کی۔

ایرانی وزیر خارجہ نے میڈیا سے گفتگو میں کہا ہے کہ نائب وزیر خارجہ علی باگری قانی نے دورہ لندن کے دوران برطانوی اعلیٰ عہدے داروں کے سامنے معاملے کو اٹھایا ہے اور رقم کی فوری ادائیگی کا مطالبہ کیا ہے۔ انکا کہنا تھا کہ برطانیہ کو مزید حیلے بہانے تراشنے کے بجائے ایرانی قوم کی رقم واپس کردینی چاہیے۔

ایک طرف ایرانی حکومت نے 40 سال سے لٹکی رقم کی فوری واپسی کا مطالبہ کیا ہے جبکہ برطانوی سیاستدان ادائیگی کو ایران میں قید دوہری شہریت کے حامل برطانوی شہریوں کی حوالگی سے مشروط کرنے کی تجویز سامنے لے آئے ہیں۔

ایرانی سیاسی رہنما معاملے پر منقسم نظر آتے ہیں انکا کہنا ہے کہ شرط برطانیہ کی جانب سے ملک میں سیاسی مداخلت کے مترادف ہے جبکہ کچھ قیدیوں کی حوالگی کی شرط پر بھی متفق ہیں، انکا ماننا ہے کہ ملک کو لاحق معاشی بحران سے نکالنے کے لیے ہر حال میں رقم واپس لینی چاہیے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

four × 1 =

Contact Us