پیر, دسمبر 6 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

دنیا سے بھوک مٹانے کے لیے ایلن مسک کی امداد کے اعلان پر اقوام متحدہ نے تفصیلی منصوبہ شائع کر دیا

اقوام متحدہ نے دنیا کے امیر ترین شخص ایلن مسک کی جانب سے خطیر رقم چندہ کرنے کی مشروط پیشکش کے جواب میں 2022 میں خوراک سے محروم افراد کو مفت خوراک فراہم کرنے کا منصوبہ پیش کر دیا ہے۔ عالمی ادارہ خوراک کے سربراہ ڈیوڈ بیاسلے نے منصوبے کی تفصیل ٹویٹر کھاتے پر شائع کی ہے۔

منصوبے کی تفصیل کے مطابق 6 اعشاریہ 6 ارب ڈالر کی مدد سے اقوام متحدہ 4 کروڑ 20 لاکھ لوگوں کو مفت خوراک مہیا کرے گی، تقریباً آدھی رقم یعنی 3 اعشاریہ 5 ارب ڈالر خوراک کی خریداری اور ترسیل میں خرچ ہو گی، 2 ارب ڈالر ان غریب لوگوں کو نقد صورت میں ادا کیے جائیں گے جو خوراک کی کمی کا شکار ملک سے تو نہیں البتہ وہ خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں۔ 70 کروڑ ڈالر خوراک کے نئے منصوبے شروع کرنے، جاری منصوبوں کو رواں رکھنے کے لیے استعمال ہوں گے جبکہ 40 کروڑ ڈالر عملے کی تنخواہوں پر خرچ ہوں گے۔

واضح رہے کہ گزشتہ ماہ اقوام متحدہ کے ایک اعلیٰ عہدے دار نے ایلن مسک اور جیف بوزوس کا اپنی ایک ٹویٹ میں حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگر یہ اپنی دولت کا 2 فیصد بھی خرچ کریں تو دنیا سے غربت کو مٹایا جا سکتا ہے۔ جس پر ایلن مسک نے ادارے سے شفاف طریقے سے منصوبہ چلانے کی شرط پر رقم دینے کی حامی بھر دی تھی۔ ایلن مسک کے اس اعلان کے ساتھ ہی ٹویٹ دنیا بھر میں مشہور ہوئی اور اعلان وک خوب سراہا گیا۔

ایلن مسک نے اقوام متحدہ سے تفصیلی منصوبہ پیش کرنے کا مطالبہ کیا تھا، مسک کا مزید مطالبہ تھا کہ منصوبہ شفاف ہونا چاہیے، اور اسکا آزاد ذرائع سے احتساب بھی ہو گا۔ دنیا کے امیر ترین شخص نے اپنے اعلان میں مزید کہا کہ اگر اس سے دنیا کی بھوک ختم ہو سکے تو وہ ٹیسلا کی گاڑیاں بیچ کر بھی یہ رقم ضرور ادا کریں گے۔

ایلن مسک کے اعلان کرتے ہی اقوام متحدہ کے عملے نے ایک وضاحتی بیان جاری کیا اور کہا کہ اس رقم سے بھوک کا مسئلہ ہمیشہ کے لیے تو حل نہیں ہو گا البتہ ایک سال کے لیے لوگوں کو بھوک سے مرنے سے ضرور بچایا جا سکتا ہے۔

اب تفصیلی منصوبے کی جوابی ٹویٹ میں عالمی ادارہ برائے خوراک کے سربراہ نے کہا ہے کہ مسک صاحب یہ رہا ہمارا منصوبہ، قدم بڑھائیں اور لوگوں کو بھوک سے مرنے سے بچائیں۔ انہوں نے مزید امیر افراد سے بھی منصوبے میں شامل ہونے کی درخواست کی ہے۔ انکا کہنا تھا کہ کیا مزید کوئی ہے جو لوگوں کو بھوک سے مرنے سے بچانے میں دلچسپی رکھتا ہو۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us