بدھ, اکتوبر 21 Live
Shadow

شدید کشیدگی کے باوجود ایران اور امریکہ کے درمیان قیدیوں کی رہائی کے لیے خفیہ مذاکرات جاری

ایسے وقت میں جبکہ بظاہرایران اور امریکہ کے درمیان جارحانہ بیانات کی جنگ مسلسل جاری ہے، امریکی اخبار نیو یارک ٹائمزنے بڑا دعویٰ کرتے ہوئے کہا ہے کہ تہران اور واشنگٹن اپنے اپنےقیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے خفیہ مذاکرات کر رہے ہیں۔

نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق ایران کے ایک اعلیٰ عہدے دار نے بتایا کہ ایران اور امریکہ اس وقت ایک ایسے سمجھوتے پر بات چیت کر رہے ہیں جس کا مقصد امریکی بحریہ کے سینئر اہلکار کی رہائی ہے۔ اس اہلکار کو ایرانی حکام نے امریکہ میں گرفتار ایرانی ڈاکٹر کے مقابل حراست میں لے رکھا ہے۔

رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ ایران اور ٹرمپ انتظامیہ کے درمیان بڑھتے ہوئے تناؤ اور فوجی طاقت کی دھمکیوں کے پیش نظر یہ مذاکرات نارمل نوعیت کے نہیں ہیں۔ ایرانی عہدے دار ابو فاز مہر آبادی کا کہنا ہے کہ مذاکرات کا مقصد ایران میں دو سال سے زیر حراست 48 سالہ امریکی مائیکل وائٹ کا ایک ایرانی نژاد امریکی ڈاکٹر سے تبادلہ ہے۔مہر آبادی نے مذکورہ ڈاکٹر کی شناخت ظاہر نہیں کی۔ یاد رہے کہ بات چیت ابھی کسی نتیجے پر نہیں پہنچی ہے۔

امریکہ ایران اختلافات کے تناظر میں یہ بات یاد رکھنے کہ قابل ہے کہ مئی 2018ء میں امریکہ نے 2015ء میں طے پائے گئے ایرانی جوہری معاہدے سے علیحدگی اختیار کر لی تھی۔ اس کے بعد سے ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ نے ایران پر پابندیوں کے عائد کرنے اور انہیں مزید سخت کرنے کا سلسلہ شروع کر دیا۔ جس کے نتیجے میں ایران کی معیشت کی کمر ٹوٹ گئی۔ وائٹ ہاؤس کے عہدے داران نے ایرانی حکومت کے ساتھ اپنا رویہ اس قدر سخت رکھا کہ کورونا بحران کے سبب انسانی بنیادوں پر پابندیاں نرم کرنے کی ایرانی درخواست کو مسترد کر دیا یہاں تک کہ ایران کے لیے دیگر ممالک سے ادویات تک منگوانا بھی ممکن نہ رہا۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں