جمعرات, October 1 Live
Shadow

امریکی جاسوس شام میں،روسی ، ایرانی اور شامی عسکری کیمپوں کی جاسوسی کرتے پکڑے گئے

شام میں امریکی جاسوس ،روسی ، ایرانی اور شامی عسکری کیمپوں کی جاسوسی کرتے پکڑے گئے۔شامی فوج کے ہاتھوں پکڑے گئے تینوں بندوق برداروں نے روسی میڈیا کو بتایا کہ وہ امریکی حمایت یافتہ عسکریت پسند گروپ کا حصہ ہیں اور انہیں راققہ گورنری میں جاسوسی کے مشن پر بھیجا گیا تھا۔ حراست میں لیے گئے افراد کو پلمیرا شہر کے قریب صحافیوں کو دکھایا گیا ، جہاں انہیں شامی فوج نے رکھا ہوا تھا۔ تینوں افراد نے دعویٰ کیا کہ ان کا تعلق جنوب مشرقی شام کے علاقے ال تنف میں قائم امریکی اڈے کے آس پاس قائم ملیشیا گروپ ، انقلابی کمانڈو آرمی سے ہے۔ حراست میں لئے گئے افراد نے بتایا کہ وہ التنف سے موٹرسائیکلوں پر شمال کی طرف صوبہ رقہ کے علاقے منصورہ میں شامی ، روسی اور ایرانی کیمپوں کی جاسوسی کے لئے آئے تھے۔

انہوں نے شام کی حفاظتی چوکیوں اور گشتی پولیس کو چکمہ دینے کے لئے بڑی سڑکوں پر سفرسے گریز کیا لیکن ان کا اسمگلررہنما ،غلطی سے انہیں ایک مائن فیلڈ میں لے گیا ، جہاں وہ خود اور ایک لڑاکا ہلاک ہوگیا۔ پانچ زندہ بچ جانے والوں میں سے تین کو جلد ہی شامی فوج نے قبضے میں لے لیا۔ شامی فوج نے کلاشنکوف رائفلیں ، دستی بم ، آئی ڈی ، رقم اور منشیات بھی صحافیوں کودکھائیں جن کے بارے میں فوج کا کہنا تھا کہ گرفتاری کے وقت اس گروہ کا قبضہ تھا۔ ساتھ ہی دو موٹرسائیکلوں کا ملبہ بھی مائن فیلڈ سے ممکنہ طور پر برآمد ہوا۔

واضح رہے کہ انقلابی کمانڈو آرمی ، یا مغاویر الثورہ (ایم ٹی) ، شام میں حکومت مخالف مسلح گروپوں میں سے ایک ہے جن کو واشنگٹن کی حمایت حاصل ہے۔ یہ سن 2015 میں غالباً دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ (آئی ایس ، سابقہ ​​داعش) سے لڑنے کے لئے تشکیل دی گئی تھی ۔ اس وقت ، ان قیدیوں نے دعوی کیا کہ انہوں نے اردن میں جدید اسلحہ اور سی آئی اے کی تربیت حاصل کی ہے۔

مبینہ طور پر آج اس گروپ کو امریکی حمایت یافتہ ملیشیا فورس میں تبدیل کردیا گیا ہے جو ال تنف فوجی اڈے کو اضافی سیکیورٹی فراہم کرتی ہے۔ زیر حراست افراد میں سے ایک نے بتایا کہ اسے قریبی پناہ گزین کیمپ روکبان سے ایم ٹی میں بھرتی کیا گیا تھا ، جہاں وہ بیکر کی حیثیت سے کام کرتا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ انہوں نے امریکی انسٹرکٹرز سے بنیادی فوجی تربیت حاصل کی۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں