اتوار, April 10 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

روس اورچین عالمی منظرنامے کو بدل دینے والااتحادبناسکتے ہیں، تاہم ایسا کوئی منصوبہ فی الحال زیرغورنہیں: صدر پوتن

دنیا کی تین بڑی عسکری قوتوں میں سے دو – روس اور چین کا مستقبل میں ایسا اتحاد بن سکتا ہےجو عالمی توازن کو بالکل ہی بدل کر رکھ دے۔ اس بات کا اظہار روسی صدر ولادیمیر پوتن کی جانب سے ایک تحقیقی ادارے کی نشست میں سامنے آیا ہے، تاہم صدر پوتن کا کہنا ہے کہ فی الحال ایسا کوئی منصوبہ زیر غور نہیں ہے۔

والدائی ڈسکشن کلب کی بیٹھک میں گفتگو کے دوران صدر پوتن کا کہنا تھا کہ اگرچہ روس کو چین کے ساتھ کسی اتحاد کی ضرورت نہیں ہے تاہم مفروضے کے طور پر دیکھا جائے تو ایسا ممکن بھی ہے۔ دونوں بڑی طاقتیں تیزی سے ایک دوسرے کے قریب آ رہی ہیں اور مشترکہ عسکری مشقوں کا رواج بھی پروان چڑھ رہا ہے۔

واضح رہے کہ والدائی ایک روسی تحقیقی ادارہ ہے جسے 2004 میں قائم کیا گیا تھا، ادارے کا ہر سال سوچی میں اجلاس منعقد ہوتاہے، جس میں صدر پوتن بھی ضرور شریک ہوتے ہیں، اس سال کووڈ19 کی وجہ سے ڈیجیٹل اجلاس کا انعقاد کیا گیا تھا۔

اجلاس میں صدر پوتن کا کہنا تھا کہ روس اور چین کے تعلقات اس وقت تاریخی عروج پر ہیں، دونوں ممالک کا ایک دوسرے پر بھرپور اعتماد ہے اور باہمی منصوبوں میں کام کی رفتار بھی تعلقات کو مظبوط بنا رہی ہے۔

صدر پوتن کا کہنا تھا کہ ماسکو اور بیجنگ عسکری شعبے سمیت ہر میدان میں تعاون کو بڑھا رہے ہیں، چین نے روسی عسکری مشق قافقاز میں شرکت کر کے اعتماد کو نئے عروج تک پہنچایا ہے، جبکہ ٹیکنالوجی کے میدان میں بھی دونوں ریاستیں ایک دوسرے کا بھرپور ساتھ دے رہی ہیں۔

روسی صدر کا کہنا تھا کہ تعاون صرف عسکری و ٹیکنالوجی کے شعبوں میں ہی نہیں ہے بلکہ ہم مشترکہ طور پر انتہائی حساس شعبوں میں بھی کام کر رہے ہیں۔

دونوں ممالک کی باہمی تجارت 111 ارب ڈالر کو تجاوز کر رہی ہے اور دونوں ممالک ڈالر کی عالمی مارکیٹ پر اجارہ داری کے خلاف بھی مشترکہ حکمت عملی اپنائے ہوئے ہیں۔ صدر پوتن کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک میں ہونے والی آدھی سے زیادہ تجارت ڈالر کے بجائے مقامی کرنسیوں میں ہوتی ہے، اور اس تناسب کو مزید بڑھانے کا ارادہ بھی ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us