بدھ, جولائی 28 Live
Shadow
سرخیاں
انٹرپول کی 47 ممالک میں بڑی کارروائی: انسانی تجارت، منشیات اور جسم فروشی کے لیے لڑکیوں کو بیچنے والے 286 افراد گرفتار، 430 افراد بازیابلبنان میں سیاسی بحران و معاشی بدحالی: ارب پتی کاروباری شخصیت اور سابق وزیراعظم نجیب میقاطی حکومت بنانے میں کامیاب، فرانسیسی منصوبے کے تحت ملک کو معاشی بدحالی سے نکالنے کا اعلانجنگی جہازوں کی دنیا میں جمہوری انقلاب: روس نے من چاہی خوبیوں کے مطابق جدید ترین جنگی جہاز تیار کرنے کی صلاحیت کا اعلان کر دیا، چیک میٹ نامی جہاز ماکس-2021 نمائش میں پیشکیوبا میں کورونا اور تالہ بندی کے باعث معاشی حالات کشیدہ: روس کا خوراک، ماسک اور ادویات کا بڑا عطیہ، پریشان شہریوں کے انتظامیہ اور امریکی پابندیوں کے خلاف بڑے مظاہرےچینی معاملات میں بیرونی مداخلت ایسے ہی ہے جیسے چیونٹی کی تناور درخت کو گرانے کی کوشش: چین نے سابق امریکی وزیر تجارت سمیت 6 افراد پر جوابی پابندیاں عائد کر دیںمغربی یورپ میں کورونا ویکسین کی لازمیت کے خلاف بڑے مظاہرے، پولیس کا تشدد، پیرس و لندن میدان جنگ بن گئے: مقررین نے ویکسین کو شیطانی ہتھیار قرار دے دیا – ویڈیوجرمنی: پولیس نے بچوں اور جانوروں سے جنسی زیادتی کی ویڈیو آن لائن پھیلانے والے 1600 افراد کا جال پکڑ لیا، مجرمانہ مواد کی تشہیر کیلئے بچوں کے استعمال کا بھی انکشافگوشت کا تبادلہصدر بائیڈن افغانستان سے انخلا پر میڈیا کے کڑے سوالوں کا شکار: کہا، امارات اسلامیہ افغانستان ۱ طاقت ضرور ہے لیکن ۳ لاکھ غنی افواج کو حاصل مدد کے جواب میں طالبان کچھ نہیں، تعاون جاری رکھا جائے گاامریکہ، برطانیہ اور ترکی کا مختلف وجوہات کے بہانے کابل میں 1000 سے زائد فوجی تعینات رکھنے کا عندیا: امارات اسلامیہ افغانستان کی معاہدے کی خلاف ورزی پر نتائج کی دھمکی

ڈرون حملے اس لیے بڑھائے کہ مجھے دہشت گردی کیخلاف نرم نہ سمجھا جائے: اوباما کی کتاب میں وضاحت پر جنگوں کے خلاف لابی اور انٹرنیٹ صارفین کا ہنگامہ

سابق امریکی صدر باراک حسین اوباما کی نئی کتاب میں ڈرون حملوں سے متعلق انکی وضاحت نے امریکی جنگوں کے خلاف آواز کو مزید قوت عطا کر دی ہے۔ امریکی صدر نے معذرت خوانہ انداز میں لکھا ہے کہ وہ کبھی بھی ڈرون حملوں کا حکم دیتے ہوئے خوش نہیں تھے لیکن وہ ایسا کوئی خطرہ بھی مول نہیں لینا چاہتے تھے کہ انہیں دہشت گردی کے خلاف نرم سمجھا جائے۔

سابق صدر نے “اے پرامسڈ لینڈ” میں اپنے دور حکومت کے دوران متنازعہ ڈرون حملوں میں اضافے کی وضاحت دی ہے۔ اوباما نے لکھا ہے کہ انکے پہلے سپہ سالار ریحم ایمینوئل نے اسٹیبلشمنٹ کی دہشت گردوں کی لمبی فہرست کو مدنظر رکھتے ہوئے سخت محنت کی، وہ اس خوف میں مبتلا رہے کہ انکے نئے منتخب لبرل شبیہ والے صدر کو دہشت گردی کے خلاف نرم نہ سمجھا جائے۔ اوباما لکھتے ہیں کہ اس سے وہ خوش نہ تھے اور نہ ہی انہیں اس سے طاقتور ہونے کا احساس ہوتا تھا، البتہ وہ کوشش ضرور کرتے تھے کہ حملہ زیادہ سے زیادہ حملہ مؤثر ہو۔

لیکن صدر اوباما کے ناقدین ہمیشہ سے ڈرون کے غیر مؤثر ہونے کے قائل رہے ہیں، 2015 میں ڈرون حملوں سے متعلق سامنے آنے والے دستاویزات سے بھی پتہ چلتا ہے کہ اس میں 90 فیصد ہلاکتیں معصوم شہریوں کی ہوئیں، نہ کہ مبینہ دہشت گردوں کی۔

یاد رہے کہ صدر اوباما نے اپنی انتخابی مہم مشرق وسطیٰ میں جنگوں کے خاتمے کے وعدے پر لڑی تھی لیکن وہ انہیں مزید پھیلانے کے مرتکب ہوئے۔ شام اور لیبیا میں جنگوں کے پھیلاؤ نے ڈیموکریٹ اور جنگوں کو آپس میں جوڑ دیا ہے۔ اگرچہ ڈرون حملے بھی جارج بش کے دور میں شروع ہوئے لیکن اوباما کے 8 سالہ دور میں ان میں ریکارڈ اضافہ ہوا، جس میں ہونے والے عوامی نقصان پر اوباما کو شدید تنقید کا سامنا رہا ہے۔

رشیا ٹوڈے نے صدر اوباما کے ڈرون سے ناخوش ہونے کے بیان پر انکے وائٹ ہاؤس میں ایک خطاب کا حوالہ دیا ہے، جس میں صدر اوباما ڈرون کو لے کر ایک حاضرین کو ایک چٹکلہ سناتے ہوئے، جس سے ہال میں موجود امریکی بھی خوب محظوظ ہوتے ہیں۔

اوباما کے کتاب میں وضاحت پر جنگوں کے خلاف لابی کے علاوہ انٹرنیٹ پر صارفین بھی اوباما کو دکھاوے کے لیے لوگوں کو مارنے والا اور میکاولی کے القابات سے نواز رہے ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us