ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

برطانیہ کا شہریوں کے موٹاپے سے نمٹنے کیلئے چپس، چاکلیٹ اور بوتلوں کی فروخت روکنے کا فیصلہ کر لیا: قانون سازی پر کام شروع

برطانوی حکومت نے شہریوں میں بڑھتے موٹاپے اور غیر صحتمند رحجان کو روکنے کے لیے اہم اور بڑا قدم اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے۔ ایک نئے قانون کے تحت برطانیہ میں بازاروں اور دکانوں میں چپس، چاکلیٹ، بوتلیں اور دیگر غیر خالص/فیکٹریوں میں تیار کردہ اشیاء کو نمایاں جگہوں، راہداریوں پر سجانے/رکھنے پر پابندی لگا دی جائے گی۔

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق قانون میں آہستہ آہستہ مزید سختی لائی جائے گی، اور 2022 تک ایسی غیر صحتمد اشیاء پر خصوصی بچت، اشتہارات وغیرہ پر بھی پابندی لگا دی جائے گی۔

اطلاعات کے مطابق ابتداء میں چھوٹے دکانداروں کو کچھ وقت دیا جائے گا تاہم بڑی مارکیٹوں میں قانون پر سختی سے عمل کروایا جائے گا۔

مارکیٹ ماہرین کے مطابق قانون سے برطانیہ میں بہت سے بڑے مارکے شدید متاثر ہو سکتے ہیں، جن میں معروف کریانہ سٹور ٹیسکو، ایمازون، نندوس اور کھوکھے والے بھی متاثر ہوں گے۔

قانون پر مقامی سماجی حلقوں میں ملا جلا ردعمل سامنے آیا ہے، سماجی میڈیا پر قانون کی ستائش کی جارہی ہے اور اسے عوامی صحت کے لیے اچھا اقدام قرار دیا جارہا ہے، تاہم ٹی وی شو میں کچھ ماہرین اسے حکومتی جبر سے تعبیر دے رہے ہیں، انکا کہنا ہے کہ ایک آزاد شہری ہونے کے ناطے وہ جو چاہیں کر سکتے ہیں، کھا سکتے ہیں، مسئلہ عوامی آگاہی اور صحت مند خوراک کا مہنگا ہونا ہے، اگر حکومت واقع عوامی صحت کے لیے فکرمند ہے تو اسے بڑھتی معاشی تفریق ختم کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے۔

دوسری طرف امریکی شہریوں کی جانب سے بھی قانون کی ستائش کی جا رہی ہے، اور انہوں نے امریکہ میں بھی ایسا قانون لانے پر زور دیا ہے۔

یاد رہے کہ برطانوی وزیراعظم نے کورونا وباء کے دوران تالہ بندی کے نتیجے میں موٹاپے کی بڑھتی شکایت کے جواب میں عوامی آگاہی کے لیے تقریباً ڈیڑھ کروڑ ڈالر کی رقم مختص کی ہے۔

یاد رہے کہ برطانوی حکومت کے اعدادوشمار کے مطابق ملک کے 67٪ مرد اور 60٪ خواتین یا تو موٹاپے کا شکار ہیں یا وہ معیار سے زائد وزن کے حامل ہیں، جبکہ بچوں میں بھی موٹاپے کی شکایت دوگنا ہو چکی ہے، اور یہ رحجان خصوصی طور پر ان علاقوں میں زیادہ ہے جہاں نسبتاً غریب افراد رہائش پذیر ہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us