پیر, جون 14 Live
Shadow
سرخیاں
ترکی: 20 ٹن سونا اور 5 ٹن چاندی کا نیا ذخیرہ دریافت، ملکی سالانہ پیداوار 42 ٹن کا درجہ پار کر گئی، 5 برسوں میں 100 ٹن تک لے جانے کا ارادہحکومت پنجاب کا ویکسین نہ لگوانے والوں کے موبائل سم کارڈ معطل کرنے کی پالیسی لانے کا فیصلہموساد کے سابق سربراہ کا ایرانی جوہری سائنسدان اور مرکز پر سائبر حملے کا اعترافی اشارہ: ایرانی سائنسدانوں کو منصوبہ چھوڑنے پر معاونت کی پیشکش کر دییورپی اشرافیہ و ابلاغی اداروں کے برعکس شہریوں کی نمایاں تعداد نے روس کو اہم تہذیبی شراکت دار و اتحادی قرار دے دیاروسی بحریہ نے سٹیلتھ ٹیکنالوجی سے لیس جدید ترین بحری جہاز کا مکمل نمونہ تیار کر لیا: مکمل جہاز آئندہ سال فوج کے حوالے کر دیا جائےگاٹویٹر کو نائیجیریا میں دوبارہ بحالی کیلئے مقامی ابلاغی اداروں کی طرح لائسنس لینا ہو گا، اندراج کروانا ہو گا: افریقی ملک کا امریکی سماجی میڈیا کمپنی کو دو ٹوک جواب، صدر ٹرمپ کی جانب سے پابندی پر ستائش کا بیانکاراباخ آزادی جنگ: جنگی قیدی چھڑوانے کے لیے آرمینی وزیراعظم کی آزربائیجان کو بیٹے کی حوالگی کی پیشکشمجھ پر حملے سائنس پر حملے ہیں: متنازعہ امریکی مشیر صحت ڈاکٹر فاؤچی کا اپنے دفاع میں نیا متنازعہ بیان، وباء سے شدید متاثر امریکیوں کے غصے میں مزید اضافہچین 3 سال کے بچوں کو بھی کووڈ-19 ویکسین لگانے والا دنیا کا پہلا ملک بن گیاایرانی رویہ جوہری معاہدے کی بحالی میں تعطل کا باعث بن سکتا ہے: امریکی وزیر خارجہ بلنکن

چین کی دفاعی پالیسی میں تبدیلی؟ صدر ژی کی افواج کو 2021 میں بھرپور جنگی مشقیں کرنے اور ہرلمحہ تیار رہنے کی ہدایت

چینی صدر ژی جن پنگ نے فوج کو 2021 میں جنگ کے لیے اچھی تیاری کرنے اور مشقوں میں جدید ٹیکنالوجی کے بھرپور استعمال کی ہدایات جاری کی ہیں۔ واضح رہے کہ امریکی ایماء پر ہندوستان اور تائیوان نے چین کے ساتھ چھڑچھاڑ شروع کر رکھی ہے، ماہرین کا کہنا ہے کہ چینی صدر کا بیان اسی تناظر میں ہو سکتا ہے۔

ملک کے سربراہ ہونے کے ناطے چینی صدر فوج کی مرکزی قیات بھی سنبھالتے ہیں، ایک اعلیٰ سطحی اجلاس میں خطاب کے دوران صدر ژی کا کہنا تھا کہ فوج کو کسی بھی لمحے حملے کے لیے تیار رہنا چاہیے، پھر چاہے وہ کوئی اعلیٰ افسر ہو یا سپاہی، اسے ملک کی سلامتی کے لیے ہمیشہ ولولے سے بھرپور ہونا چاہیے، اور انہیں موت کا کوئی خوف نہیں ہونا چاہیے۔ چینی صدر کا مزید کہنا تھا کہ فوجی اہلکار ٹیکنالوجی کے بھرپور استعمال کی مشقیں کریں، اور ہر میدان میں اگلے قدموں پر رہیں۔ جدید جنگوں میں ٹیکنالوجی کا کردار بہت اہم ہے، اس سے کسی صورت میں سستی نہ بڑتیں۔

ساؤتھ چائینہ مارننگ پوسٹ کے مدیر نے چینی صدر کے بیان کو ملک کی عسکری پالیسی میں تبدیلی سے تشبیہ دی ہے، انکا کہنا ہے کہ اس سے پہلے صدر ژی مسائل کو حل کرنے اور جنگوں سے اجتناب کے بیانات جاری کرتے تھے، یہ پہلی بار ہے کہ صدر ژی نے فوجوں کو صف بندی کا کہا ہے۔ جس کی ممکنہ وجہ ہندوستان کی اشتعال انگیزیاں اور تائیوان کی امریکی مدد ہو سکتی ہے۔

یاد رہے کہ ہمالیہ کی سرحوں پر ہوئی جھڑپ میں ہندوستان کے 20 فوجی مارے گئے تھے، جبکہ چین نے اپنی طرف ہوئے نقصان کی معلومات جاری ہی نہیں کی تھیں۔ دونوں ممالک کے مابین صورتحال تب سے کشیدہ ہے، اگرچہ جنگ بندی کا اعلان دونوں جانب سے دوہرایا جا رہا ہے۔

ایسے ہی 2020 کے آخر میں تائیوان کے پانیوں میں امریکی بحری جہاز کے داخلے پر شدید غصے کا اظہار کرتے ہوئے چین نے فوری ردعمل میں اپنا بحری بیڑہ اسے واپس دھکیلنے کے لیے بھیجا تھا، جبکہ تائیوان کو جدید اسلحے کی فراہمی نے بھی چین کی تشویش میں اضافہ کر رکھا ہے۔

اس کے علاوہ چین اور امریکہ ایک دوسرے پر بحیرہ جنوبی چین میں اشتعال انگیزی کا الزام بھی لگاتے رہتے ہیں، جبکہ تجارتی جنگ اور ہانگ کانگ کا مسئلہ بھی دن بدن بگڑتا جا رہا ہے اور اب دونوں ممالک میں لفاظی جنگ بھی اپنے عروج پر ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us