جمعرات, اکتوبر 28 Live
Shadow
سرخیاں
جمناسٹک عالمی چیمپین مقابلے میں روسی کھلاڑی دینا آویرینا نے 15ویں بار سونے کا تمغہ جیت کر نیا عالمی ریکارڈ بنا دیا، بہن ارینا دوسرے نمبر پر – ویڈیویورپی یونین ہمارے سر پر بندوق نہ تانے، رویہ نہ بدلا تو بریگزٹ کی طرز پر پولیگزٹ ہو گا: پولینڈ وزیراعظمسابق سعودی جاسوس اہلکار سعد الجبری کا تہلکہ خیز انٹرویو: سعودی شہزادے محمد بن سلمان پر قتل کے منصوبے کا الزام، شہزادے کو بے رحم نفسیاتی مریض قرار دے دیاملکی سیاست میں مداخلت پر ترکی کا سخت ردعمل: 10 مغربی ممالک نے مداخلت سے اجتناب کا وضاحتی بیان جاری کر دیا، ترک صدر نے سفراء کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ واپس لے لیاترکی کو ایف-35 منصوبے سے نکالنے اور رقم کی تلافی کے لیے نیٹو کی جانب سے ایف-16 طیاروں کو جدید بنانے کی پیشکش: وزیر دفاع کا تکنیکی کام شروع ہونے کا دعویٰ، امریکہ کا تبصرے سے انکارترک صدر ایردوعان کا اندرونی سیاست میں مداخلت پر 10 مغربی ممالک کے سفراء کو ناپسندیدہ قرار دینے کا فیصلہبحرالکاہل میں چینی و روسی جنگی بحری مشقیں مکمل – ویڈیونائجیریا: جیل حملے میں 800 قیدی فرار، 262 واپس گرفتار، 575 تاحال مفرورترکی: فسلطینی طلباء کی جاسوسی کرنے والا 15 رکنی صیہونی جاسوس گروہ گرفتار، تحقیقات جاریامریکی انتخابات میں غیر سرکاری تنظیموں کے اثرانداز ہونے کا انکشاف: فیس بک کے مالک اور دیگر ہم فکر افراد نے صرف 2 تنظیموں کو 42 کروڑ ڈالر کی خطیر رقم چندے میں دی، جس سے انتخابی عمل متاثر ہوا، تجزیاتی رپورٹ

صدر ٹرمپ کی ایک اور عالمی سفارتی ثالثی کامیاب: قطر اور خلیجی ممالک میں 3 سال سے جاری کشیدگی ختم، تعلقات بحال

خلیج تعاون کونسل کے حالیہ اجلاس میں قطر اور خلیجی ممالک کے مابین پچھلے تین سال سے جاری کشیدگی ختم ہو کر علاقائی ممالک میں سفارتی تعلقات پھر بحال ہو گئے ہیں۔ اگرچہ تعلقات میں بحالی بھی یوں اچانک ہوئی ہے جیسے کہ اس میں کشیدگی آئی تھی البتہ ماہرین کے مطابق اس کی بڑی وجہ امریکہ میں سیاسی قیادت کی تبدیلی ہے۔

علاقائی تعاون تنظیم میں شرکت کے لیے امیر قطر تمیم بن حماد التھانی سعودی عرب پہنچے تو انکا استقبال سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کیا اور قطر کے لیے زمینی، فضائی، بحری اور تجارتی تمام راستے کھولنے کا اعلان کیا۔ واضح رہے کہ قطر پر دہشت گردوں کی مدد کے الزام کے ساتھ سعودی عرب، مصر، متحدہ عرب امارات اور بحرین نے 3 سال قبل سفارتی پابندیاں عائد کر دی تھیں، جسے امریکی حمایت بھی حاصل تھی۔

تاہم اب خلیجی ممالک میں آپسی کشیدگی کو ختم کرنے میں بھی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ہی ثالثی کا کردار ادا کیا ہے، صدر ٹرمپ نے اپنے داماد جیرڈ کشنر کو دونوں اتحادیوں کی قیادت سے ملاقات کے لیے سعودی عرب اور قطر بھیجا تھا جس کے نتیجے میں بالآخر ایک معاہدہ طے پایا ہے جس پر الولا سمٹ میں دستخط ہوں گے۔

تعلقات کی بحالی پر سعودی ولی عہد نے کہا کہ اس سے علاقائی اتحاد کو تقویت ملے گی اور علاقائی مسائل کو حل کرنے میں مدد ملے گی۔

یاد رہے کہ 2017 میں تعلقات ختم کرنے کی دھمکی کے ساتھ خلیجی ممالک نے قطر کے سامنے مختلف شرائط رکھی تھیں، جن میں الجزیرہ ٹی وی کے نیٹ ورک کو بند کرنا اور عسکری ضروریات کے لیے ترکی پر انحصار اور عسکری تعلقات کو محدود کرنا نمایاں تھیں۔ تاہم قطر نے شرائط کو ماننے سے انکار کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ شرائط قطر کو حکم دینے کے مترادف ہیں، اندرونی معاملات میں مداخلت قبول نہیں۔

تعلقات کی بحالی پر مطالبات میں سے کوئی مطالبہ پورا نہیں ہوا البتہ صدر ٹرمپ کے مطابق قطر خلیجی ممالک کے خلاف قطع تعلق سے ہونے والے نقصان پر دائر درخواست واپس لے لے گا۔

روایت پسند امریکی حلقوں میں خلیجی ممالک کے تعلقات کی بحالی کو صدر ٹرمپ کی آخری بڑی عالمی سفارتی فتح کے طور پر دیکھا جا رہا ہے، ماہرین کا کہنا ہے کہ اس کا اثر صدر جو بائیڈن کی مشرق وسطیٰ کی پالیسی پر ضرور پڑے گا، اور صدر ٹرمپ نے خطے میں اپنے اتحادیوں کو ایک بار پھر اکٹھا کر دیا ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us