Shadow
سرخیاں
مغربی طرز کی ترقی اور لبرل نظریے نے دنیا کو افراتفری، جنگوں اور بےامنی کے سوا کچھ نہیں دیا، رواں سال دنیا سے اس نظریے کا خاتمہ ہو جائے گا: ہنگری وزیراعظمامریکی جامعات میں صیہونی مظالم کے خلاف مظاہروں میں تیزی، سینکڑوں طلبہ، طالبات و پروفیسران جیل میں بندپولینڈ: یوکرینی گندم کی درآمد پر کسانوں کا احتجاج، سرحد بند کر دیخود کشی کے لیے آن لائن سہولت، بین الاقوامی نیٹ ورک ملوث، صرف برطانیہ میں 130 افراد کی موت، چشم کشا انکشافاتپوپ فرانسس کی یک صنف سماج کے نظریہ پر سخت تنقید، دور جدید کا بدترین نظریہ قرار دے دیاصدر ایردوعان کا اقوام متحدہ جنرل اسمبلی میں رنگ برنگے بینروں پر اعتراض، ہم جنس پرستی سے مشابہہ قرار دے دیا، معاملہ سیکرٹری جنرل کے سامنے اٹھانے کا عندیامغرب روس کو شکست دینے کے خبط میں مبتلا ہے، یہ ان کے خود کے لیے بھی خطرناک ہے: جنرل اسمبلی اجلاس میں سرگئی لاوروو کا خطاباروناچل پردیش: 3 کھلاڑی چین اور ہندوستان کے مابین متنازعہ علاقے کی سیاست کا نشانہ بن گئے، ایشیائی کھیلوں کے مقابلے میں شامل نہ ہو سکےایشیا میں امن و استحکام کے لیے چین کا ایک اور بڑا قدم: شام کے ساتھ تذویراتی تعلقات کا اعلانامریکی تاریخ کی سب سے بڑی خفیہ و حساس دستاویزات کی چوری: انوکھے طریقے پر ادارے سر پکڑ کر بیٹھ گئے

فرانس میں نئے جنسی قانون کی منظوری: 15 سال سے چھوٹے بچوں کے ساتھ جنسی تعلق پر 20 سال سزا ہو گی

فرانسیسی پارلیمنٹ نے 15 سال سے چھوٹے بچوں کے ساتھ جنسی تعلق پر 20 سال قید کی سزا کی منظوری دے دی ہے، نئے جنسی قانون میں 18 سال تک کے محرم رشتوں سے جنسی تعلق کو زیادتی سمجھا جانے اور برابر سزا کی منظوری بھی دی گئی ہے۔ نیا قانون رواں سال سامنے آنے والے کچھ جنسی زیادتی کے واقعات کے بعد بنایا گیا ہے جس کے بعد سماجی میڈیا پر صارفین کی جانب سے سخت برہمی کا اظہار کیا گیا تھا۔

قانون کی منظوری پر پارلیمنٹ نے مشترکہ اعلامیے میں کہا ہے کہ یہ ایک تاریخی قانون ہے، اس کے ہمارے بچوں اور معاشرے پر اچھے اثرات پڑیں گے، قانون نے واضح کر دیا ہے کہ بچے جنسی تسکین کے لیے نہیں ہیں۔

قانون میں بچوں کو استعمال کرتے ہوئے جنسی فلمیں بنانے پر بھی بحث کی ہے اور ایسا کرنے والے کو اضافی 10 سال سزا اور پونے تین کروڑ روپے کا جرمانہ کرنے کی منظوری دی گئی ہے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل فرانس میں بچوں سے جنسی تعلق پر کوئی سزا نہ تھی، صرف اس صورت میں سزا دی جاتی تھی کہ اگر بچہ جنسی زیادی کا الزام لگائے یا ثابت ہو جائے گی ملزم نے اسے دھوکے سے استعمال کیا، رضامندی سے جنسی تعلق پر کوئی سزا نہ تھی۔

یاد رہے کہ 2018 میں بھی ایک 28 سالہ مرد اور 11 سالہ لڑکی کے جنسی تعلق پر سماجی میڈیا پر بچوں اور خواتین کے حقوق کی تنظیموں نے بہت چرچا کی تھی تاہم بچی کے اعتراف پر کہ اس نے تعلق اپنی رضامندی سے قائم کیا، کسی کو سزا نہ ہو سکی تھی۔ سماجی تنظیمیں تب سے ہی معاملے پر مہم چلا رہی تھٰیں اور سیمیناروں کے ساتھ ساتھ موضوع پر کتابیں اور کہانیاں شائع کی جا رہی تھیں، ج سکے اثر می بالآخر تنظیمیں عمر کی حد بندی کا قانون بنوانے میں کامیاب ہو گئی ہیں۔

یاد رہے کہ فرانسیسی اشرافیہ میں محرم رشتوں اور اپنے ہی بچوں سے جنسی تعلق ایک بڑا سماجی مسئلہ ہے، گزشتہ سال بھی ایک بڑے سماجی ماہر کی سوتیلی بیٹی نے اپنے والد پر اسکے دو چھوٹے بھائیوں سے کئی سال تک جنسی زیادتی کا الزام لگایا اور کہا کہ اسکی ماں اور دیگر لوگ بھی اس سے باخبر تھی لیکن خاموش رہے۔ معاملے میں سابق وزیر خارجہ اور ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈر کے مشترکہ بانی کا نام بھی شامل تھا۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

eight − 8 =

Contact Us