اتوار, مئی 9 Live
Shadow
سرخیاں
چینی راکٹ خلائی اسٹیشن منزل پر کامیابی سے پہنچا کر بحیرہ ہند کی فضاؤں میں جل کر بھسم: آبادی والے علاقے میں گرنے کے مغربی پراپیگنڈے پر چین کا افسوس کا اظہارکابل: اسکول پر راکٹ حملے میں متعدد طالبات سمیت 30 جاں بحق، 50 زخمیروس: دوسری جنگ عظیم میں نازی جرمنی کے خلاف فتح کا جشن، ماسکو میں فوجی پریڈ کا انعقاد – براہ راست ویڈیومالدیپ کے سابق صدر محمد نشید بم حملے میں بال بال بچ گئےبرازیل میں پولیس کے منشیات فروشوں کے خلاف چھاپے جاری: 3 روز میں 1 پولیس افسر سمیت 28 ہلاکعراق: نیٹو افواج کے زیر استعمال ہوائی اڈے پر ڈرون حملہ، کوئی جانی نقصان نہ ہونے کا دعویٰامریکی تیل ترسیل کی سب سے بڑی کمپنی پر سائبر حملہ: ملک بھر میں پہیہ جام ہونے کا خطرہ منڈلانے لگااسرائیل کوئی ریاست نہیں ایک دہشت گرد کیمپ ہے: ایرانی ریاستی سربراہ علی خامنہ ایاطالوی پولیس افسر کے قتل کے جرم میں دو امریکی سیاحوں کو عمر قید کی سزاروس کی ڈالر، یورو اور پاؤنڈ کی بجائے سونے اور چینی یوآن میں سرمایہ کاری کی پالیسی جاری، بڑے اہداف حاصل

یکم مئی تک افغانستان سے امریکی انخلاء کے معاہدے پر عملدرآمد نہ ہونے پر مجاہدین حملے کا حق رکھتے ہیں، مرکزی قیادت جلد فیصلہ کرے گی: ترجمان طالبان

افغان طالبان نے امریکہ کی جانب سے امن معاہدے کی پاسداری نہ کرنے پر قابض افواج کے خلاف عسکری کارروائی شروع کرنے کا عندیا دیا ہے۔

واضح رہے کہ بروز ہفتہ امریکہ کے افغانستان سے انخلاء کے وعدے کی تاریخ گزر گئی، تاہم نو منتخب صدر بائیڈن نے یکطرفہ طور پر انخلاء کی تاریخ کو بڑھایا اور طالبان سے 11 ستمبر تک وقت مانگا تاہم طالبان نے اس حوالے سے باضابطہ رابطہ نہ ہونے اور باقاعدہ دستاویزی وعدے پر عملدرآمد نہ ہونے پر کارروائیاں شروع کرنے کا عندیا دیا ہے۔

افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ نے اپنی خصوصی ٹویٹ میں کہا کہ چونکہ وعدے کے مطابق یکم مئی کو افغانستان سے غیر ملکی افواج کے انخلاء پر عملدرآمد نہیں ہوا لہٰذا اب اسلامی امارات افغانستان کے مجاہدین برحق ہیں کہ وہ قابض افواج کے خلاف کارروائی کر سکیں۔ مجاہدین اب اسلامی امارات کی مرکزی قیادت کے فیصلے کا انتظار کریں گے، اور ان شاءاللہ ملکی خود مختاری، اقدار اور مفادات کو مدنظر رکھتے ہوئے کارروائی کا اعلان کیا جائے گا۔

گزشتہ ماہ طالبان کے کچھ ذرائع نے دعویٰ کیا تھا کہ طالبان ابھی بھی امریکہ سے رابطے میں ہیں، جس کا مقصد ستمبر تک حملوں کو روکنے کے بارے میں بات چیت کرنا ہے۔ تاہم اب طالبان کی وضاحت سے یہ واضح ہو گیا ہے کہ طالبان نے بائیڈن کی واپسی کی نئی یکطرفہ تاریخ پر اتفاق نہیں کیا ہے، وہ پچھلے ماہ ترکی میں ہونے والی افغان کانفرنس میں شرکت سے بھی گریزاں رہے۔ اب آخری فیصلہ طالبان کی مرکزی قیادت کی طرف سے ہی آئے گا۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us