ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

پاکستان سمیت 53 ممالک کی سروے رپورٹ: امریکہ جمہوریت کے لیے سب سے بڑا خطرہ، بڑھتی طبقاتی تفریق اور امریکی لبرل سماجی میڈیا کا اثرورسوخ بھی جمہوریت دشمن قرار

دنیا کے 53 ممالک میں ہوئے عوامی سروے میں سامنے آیا ہے کہ 44٪ لوگوں کی رائے میں امریکہ انکے ممالک میں جمہوریت کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے۔ 53 ہزار سے زائد افراد سے پوچھے سوال کے جواب میں 44٪ کا کہنا تھا کہ امریکہ کا ان کے ملک پر اثرورسوخ اور معاملات مں مداخلت انکے ملک میں جمہوریت کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے، 26٪ افراد اس سے متفق نہیں جبکہ 38٪ کے مطابق چین کا بڑھتا اثر بھی جمہوریت کے لیے خطرہ بن رہا ہے، سروے میں صرف 28٪ افراد نے روس کو خطرہ قرار دیا ہے۔

سروے کے مطابق امریکہ کے بارے میں سب سے زیادہ منفی رائے پاکستان میں پائی جاری ہے۔ حتیٰ کہ جاپانی شہریوں نے بھی چین کی نسبت امریکہ کو بڑا خطرہ قرار دیا ہے۔ اس کے علاوہ میکسیکو، کینیڈا، کولمبیا، یونان، فلسطین پر قابض صیہونی، آسٹریلیا، یوکرین اور سویزرلینڈ کے شہریوں نے بھی بالترتیب امریکہ کو جمہوریت کے لیے سب سے بڑا خطرہ قرار دیا ہے۔

سروے لاتانا نامی تحقیقاتی ادارے نےڈنمارک سے تعلق رکھنے والے نیٹو کے سابق سیکرٹری جنرل آندریس فوگ راسموسین کے ساتھ مل کر کیا ہے۔

اگرچہ یورپی شہری امریکی اثرورسوخ اور مداخلت سے زیادہ پریشان نہیں تاہم انکے خیال میں بھی امریکہ روس اور چین کی نسبت جمہوریت کے لیے بڑا خطرہ ہے۔

سروے کے مطابق سروے میں شامل 64٪ آبادی نے دنیا میں بڑھتی طبقاتی تفریق کو بھی جمہوریت کے لیے بڑا خطرہ قرار دیا ہے۔ اس کے علاوہ 53٪ کے مطابق سماجی میڈیا پر بڑھتی آزادی رائے پر قدغنیں، 49٪ کے مطابق انتخابات میں دھاندلی اور 48٪ نے امریکی لبرل سماجی میڈیا کمپنیوں کے بڑھتے اثرورسوخ کو بھی جمہوری روایات کے لیے خطرہ قرار دیا ہے۔

عالمی مسائل میں امریکی کردار پر روس، چین اور یورپ کے شہری ایشیائی ممالک کی نسبت امریکہ کے زیادہ بڑے ناقدین میں شامل ہیں۔

سروے رپورٹ میں امریکی مداخلت پر گزشتہ سال کی نسبت جرمنی میں 20٪ جبکہ چین میں 16٪ شہریوں نے تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us