پیر, جون 14 Live
Shadow
سرخیاں
ترکی: 20 ٹن سونا اور 5 ٹن چاندی کا نیا ذخیرہ دریافت، ملکی سالانہ پیداوار 42 ٹن کا درجہ پار کر گئی، 5 برسوں میں 100 ٹن تک لے جانے کا ارادہحکومت پنجاب کا ویکسین نہ لگوانے والوں کے موبائل سم کارڈ معطل کرنے کی پالیسی لانے کا فیصلہموساد کے سابق سربراہ کا ایرانی جوہری سائنسدان اور مرکز پر سائبر حملے کا اعترافی اشارہ: ایرانی سائنسدانوں کو منصوبہ چھوڑنے پر معاونت کی پیشکش کر دییورپی اشرافیہ و ابلاغی اداروں کے برعکس شہریوں کی نمایاں تعداد نے روس کو اہم تہذیبی شراکت دار و اتحادی قرار دے دیاروسی بحریہ نے سٹیلتھ ٹیکنالوجی سے لیس جدید ترین بحری جہاز کا مکمل نمونہ تیار کر لیا: مکمل جہاز آئندہ سال فوج کے حوالے کر دیا جائےگاٹویٹر کو نائیجیریا میں دوبارہ بحالی کیلئے مقامی ابلاغی اداروں کی طرح لائسنس لینا ہو گا، اندراج کروانا ہو گا: افریقی ملک کا امریکی سماجی میڈیا کمپنی کو دو ٹوک جواب، صدر ٹرمپ کی جانب سے پابندی پر ستائش کا بیانکاراباخ آزادی جنگ: جنگی قیدی چھڑوانے کے لیے آرمینی وزیراعظم کی آزربائیجان کو بیٹے کی حوالگی کی پیشکشمجھ پر حملے سائنس پر حملے ہیں: متنازعہ امریکی مشیر صحت ڈاکٹر فاؤچی کا اپنے دفاع میں نیا متنازعہ بیان، وباء سے شدید متاثر امریکیوں کے غصے میں مزید اضافہچین 3 سال کے بچوں کو بھی کووڈ-19 ویکسین لگانے والا دنیا کا پہلا ملک بن گیاایرانی رویہ جوہری معاہدے کی بحالی میں تعطل کا باعث بن سکتا ہے: امریکی وزیر خارجہ بلنکن

چینی راکٹ خلائی اسٹیشن منزل پر کامیابی سے پہنچا کر بحیرہ ہند کی فضاؤں میں جل کر بھسم: آبادی والے علاقے میں گرنے کے مغربی پراپیگنڈے پر چین کا افسوس کا اظہار

چینی خلائی جہاز کو لے جانے والے راکٹ مارچ-5بی کے بقایاجات ہوا میں ہی جل کر راکھ بن گئے ہیں۔ مغربی میڈیا گزشتہ چند دنوں سے راکٹ کے زمین میں کسی آبادی والے علاقے میں گرنے کا بھرپور پراپیگنڈا کر رہا تھا تاہم اب معافی مانگنے سے بھی گریزاں ہے۔

چینی خلائی ادارے کا کہنا ہے کہ راکٹ کے بقایاجات بحیرہ ہند کے اوپر فضاء میں ہی بھسم ہو گیا تھا۔ راکٹ نے 29 اپریل کو چینی خلائی اسٹیشن کو خلاء میں پہنچایا تھا، اور راکٹ کے بقایا جات کا ہفتے اور اتوار کی درمیانی شب زمین پر واپس گرنا متوقع تھا، چینی سائنسدانوں کا حساب کتاب کے بعد دعویٰ تھا کہ راکٹ کے بقایا جات اول تو فضاء میں ہی بھسم ہو جائیں گے اور اگر نہ بھی ہوئے تو یہ بین الاقوامی پانیوں میں گر سکتے ہیں، یا زیادہ سے زیادہ بحیرہ روم میں اس کے گرنے کے امکانات کا اظہار بھی کیا گیا تھا۔

چینی خلائی ادارے کے مطابق راکٹ کے بقایا جات اتوار کی صبح مقامی وقت کے مطابق 10:24 پر زمین میں داخل ہوئے اور سمندر میں 72 اعشاریہ 47 مشرق اور 2 اعشاریہ 65 شمال طول البلد میں بحیرہ ہند کی فضاؤں میں ہوائی رگڑ کے باعث بھسم ہو گئے۔ بقایا جات کی فضاء میں رفتار 8 کلومیٹر فی سیکنڈ درج کی گئی تھی۔،

مختلف زرائع نے راکٹ کے بقایا جات کو اردن اور عمان کی فضاؤں میں دیکھنے کا دعویٰ بھی کیا تھا، لیکن آزادانہ گرتے ہوئے یہ بحیرہ ہند میں جا گرا۔

تیس میٹر بڑے اور 22 ٹن وزنی راکٹ کے حوالے سے کئی دنوں سے چہہ مگوئیاں جاری تھیں جو اس کے فناء ہو جانے کے بعد دم توڑ گئی ہیں۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان نے بروز جمعہ مغربی میڈیا کے تمام پراپیگنڈے کی مذمت کرتے ہوئے کہا تھا کہ راکٹ ایسے مرکب سے بنایا جاتا ہے جو زمین میں واپس داخل ہوتے ہی جل کر بھسم ہو جاتا، اس سے کسی کو نقصان پہنچنے کے امکانات انتہائی کم ہیں، مغربی میڈیا چین کو بدنام کرنے کی کوششوں سے اجتناب کرنا چاہیے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us