ہفتہ, جنوری 15 Live
Shadow
سرخیاں
قازقستان ہنگامے: مشترکہ تحفظ تنظیم کے سربراہ کا صورتحال پر قابو کا اعلان، امن منصوبے کی تفصیلات پیش کر دیںبرطانوی پارلیمنٹ میں منشیات کا استعمال: اسپیکر کا سونگھنے والے کتے بھرتی کرنے کا عندیاامریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟

سکاٹ لینڈ: شدید عوامی مطالبے پر پولیس نے گرفتار مہاجرین رہا کر دیے، شہریوں کا جشن – ویڈیو

اسکاٹ لینڈ میں شعبہ مہاجرین کے دو اہلکاروں کی جانب سے دو مہاجرین کو حراست میں لینے پر شہری دفاع میں نکل آئے، جس کے باعث پولیس کو مہاجرین کو چھوڑنا پڑا۔

گلاسگو میں تقریباً 100 مقامی افراد نے پولیس وین کے گرد گھیرا ڈال کر مہاجرین کی گرفتاری میں رخنہ ڈالا جس کے باعث پولیس نے بالآخر احتجاج کرنے والوں کے سامنے گھٹنے ٹیک دیے اور دونوں مہاجرین کو چھوڑ دیا۔ پولیس کے مہاجرین کو چھوڑنے پر شہریوں نے بھرپور خوشی کا اظہار کیا۔

جمعرات کی صبح جنوبی گلاسگو میں مظاہرین اور پولیس کے مابین ایک گھنٹہ طویل تنازعہ اس وقت کھڑا ہوا جب امیگریشن افسران نے ایک گھر سے دو تارکین وطن کو گرفتار کرکے اپنے ساتھ لے جانا چاہا۔

پولیس کو مظاہرین کو ہٹانے کی کوشش کرتے ہوئے فلمایا گیا۔ مظاہرین میں بہت سے لوگ برطانیہ کی داخلہ وزارت کی گاڑی کو روکنے کے لئے سڑک پر بیٹھ گئے، جب کہ ایک شخص گاڑی کے نیچے لیٹ گیا۔

داخلہ وزارت کے محکمے کی اس کارروائی  کی بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی۔ اسکاٹ لینڈ کی وزیر اعلیٰ نکولا اسٹارجن نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے صورتحال کو تشویشناک قرار دیا ہے۔

بعد ازاں اسکاٹ لینڈ پولیس  نے ایک بیان میں کہا کہ چیف سپرانٹنڈنٹ مارک سدرلینڈ نے حراست میں لئے دونوں افراد کو عوامی تحفظ، اور صحت کی حفاظتی تدابیر کا خیال کرتے ہوئے مقامی کمیونٹی میں چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔

 مظاہرین نے تارکین وطن کی رہائی پر اپنی خوشی کا اظہار کیا۔ ایک ویڈیو فوٹیج میں دونوں افراد کو لوگوں کے ایک ہجوم میں مقامی مسجد میں داخل ہوتے ہوئے دکھایا گیا، جو “مہاجرین کا یہاں خیرمقدم ہے” کے نعرے لگارہے تھے۔

 محبوسین کے وکیل عامر انور نے مظاہرین کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کی رہائی کا معاہدہ برطانیہ کی داخلہ وزارت اور اسکاٹ لینڈ کی وزیر اعلیٰ اور محکمہ انصاف کے سیکریٹری کے درمیان طے پایا ہے۔ انہوں مزید کہا کہ دونوں افراد کو گرفتار نہیں کیا جائے گا اور نہ آئندہ کسی کاروائی کا نشانہ بنایا جائے گا۔

اسکاٹ لینڈ کے محکمہ انصاف کے سیکریٹری حمزہ یوسف نے کہا کہ عید کے دن مسلم کمیونٹی میں داخلہ وزارت کے محکمے کی اس کارروائی پر وہ ناراض تھے۔ ان کے بقول عید کے ایسی کاروائی کا مطلب اشتعال انگیزی سے تعبیر کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ برطانوی حکومت کی تارکین وطن سے متعلق پالیسی اسکاٹ لینڈ میں خوش آئند نہیں ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us