پیر, اکتوبر 25 Live
Shadow
سرخیاں
ترک صدر ایردوعان کا اندرونی سیاست میں مداخلت پر 10 مغربی ممالک کے سفراء کو ناپسندیدہ قرار دینے کا فیصلہبحرالکاہل میں چینی و روسی جنگی بحری مشقیں مکمل – ویڈیونائجیریا: جیل حملے میں 800 قیدی فرار، 262 واپس گرفتار، 575 تاحال مفرورترکی: فسلطینی طلباء کی جاسوسی کرنے والا 15 رکنی صیہونی جاسوس گروہ گرفتار، تحقیقات جاریامریکی انتخابات میں غیر سرکاری تنظیموں کے اثرانداز ہونے کا انکشاف: فیس بک کے مالک اور دیگر ہم فکر افراد نے صرف 2 تنظیموں کو 42 کروڑ ڈالر کی خطیر رقم چندے میں دی، جس سے انتخابی عمل متاثر ہوا، تجزیاتی رپورٹبنگلہ دیش: قرآن کی توہین پر شروع ہونے والے فسادات کنٹرول سے باہر، حالات انتہائی کشیدہ، 9 افراد ہلاک، 71 مقدمے درج، 450 افراد گرفتار، حکومت کا ریاست کو دوبارہ سیکولر بنانے پر غورنیٹو کے 8 روسی مندوبین کو نکالنے کا ردعمل: روس نے سارا عملہ واپس بلانے اور ماسکو میں موجود نیٹو دفتر بند کرنے کا اعلان کر دیاشام اور عراق سے داعش کے دہشت گرد براستہ ایران افغانستان میں داخل ہو رہے ہیں، جنگجوؤں سے وسط ایشیائی ریاستوں میں عدم استحکام کا شدید خطرہ ہے: صدر پوتنآؤکس بین الاقوامی سیاست میں کشیدگی و عدم استحکام بڑھانے اور اسلحے کی نئی دوڑ کا باعث ہو گا: چین اور مشرقی ممالک کے خلاف مغرب کے نئے عسکری اتحاد پر روسی ردعملایف بی آئی نے خفیہ کارروائی میں جوہری آبدوز ٹیکنالوجی بیچتے دو فوجی انجینئر گرفتار کر لیے

میرا کشمیر شبِ تاریک کے مشعل بردار سے محروم کر دیا گیا

 وہ اک ستارہ جو ضوفگن تھا حیات کے مغربی افق پر
 سیاہ شب کے پاسبانو خوشی مناؤ کہ وہ بھی ڈوبا 

محمد اشرف خان صحرائی، کشمیر

شبِ تاریک میں کسی قافلے کے مشعل بردار کا چھن جانا ایک ایسا نقصان ہے جس کی بھرپائی ایک مشکل عمل ہے۔ تاریک راتوں میں قندیل رہبانی کا کام انجام دینے والوں کی تعداد بہت مختصر ہوتی ہے۔ ملت اسلامیہ کشمیر ایسے ہی ایک چراغ سے محروم ہوگئی۔  تحریکِ آزادئ کشمیر کی صف اوّل کے رہنما محمد اشرف خان صحرائی سنت یوسفی کی ادائیگی کے دوران اپنے خالق حقیقی سے جا ملے، اور کشمیری قافلے کا ایک اور چراغ بجھ گیا۔ صحرائی صاحب کا ثبات کوہِ بلند قامت جیسا تھا۔ ایک اونچی چوٹی والے پہاڑ کی مانند، جو زلزلوں میں بھی قائم رہتا ہے۔ وہ عظمتوں اور عزیمتوں کا ایک ایسا پہاڑ تھے جن کے ثبات سے انسانیت حق پر ثابت قدم رہنے کا سبق سیکھتی ہے۔

یہ صحرائی صاحب ہی تھے جنہوں نے عالمِ شباب میں شیخ عبداللہ کو 1975 کے اسمبلی انتخابات میں للکارا تو کاغذی شیرِ کشمیر کی ساری شیخی ہوا ہوگئی، اور وہ اپنی عادت سے مجبور اُوچھی حرکتوں اور دھونس دباؤ کی سیاست پر اتر آیا، لیکن نمائندہ کشمیر کے قدم نہیں ڈگمگائے، بلکہ اُن کی للکار وادی کے طول و عرض میں ایک ایسے انقلاب کو صور پھونک گئی جس نے خفتہ نوجوانوں کے عزم کو مہمیز عطا کردی۔

صحرائی صاحب ایک صاف گو انسان تھے۔ وہ حق بات کہنے والے اور حق بات پر مثلِ چٹان قائم رہنے والے قائد تھے۔ انہوں نے مشکل ترین ادوار میں بھی تحریکِ کشمیر کے حوالے سے اپنے مؤقف میں ذرہ برابر بھی انحراف نہ کیا۔ وہ ہر قیمت ادا کرکے حق کی بات کہنے والے تھے۔

صحرائی صاحب قربانی کا استعارہ تھے، گویا اُن کی شخصیت کا دوسرا نام ہی فدا کاری ہو۔ وہ رضائے رب کی خاطر سب کچھ تج دینے والا ایک منفرد مسافر تھا۔ ایک ایسا مسافر جو سفر کی تکان کا بالکل بھی شاکی نہ تھا۔ اُن پر بس ایک ہی دھن سوار تھی، اپنی منزل پر پہنچنے کی دھن۔ اپنی زندگی کے طویل 14 سالوں کے ماہ و سال جیل کی تاریک کوٹھڑی میں گزار کر بھی وہ اس منزل کا خواب دیکھنے سے باز نہیں آئے۔

اُن کی شخصیت کا خاصہ یہ تھا کہ وہ سب کچھ براہیمیؑ طرز پر وار دینے والی قبیل سے تعلق رکھتے تھے۔ جوانی، شباب، عمر حیات، مال و اسباب، اپنا لخت جگر، اور آخر میں اپنا وجود وار دینا اُن ہی کی شخصیت کا ایک مختصر خاکہ ہے۔ صرف ایک سال پہلے اُن کا لخت جگر داد شجاعت دیتے ہوئے مرتبہ شہادت پر فائز ہوا۔ اپنے لخت جگر کی شہادت پر جس عزم و ثبات کا مظاہرہ انہوں نے کیا اُس سے قرون اؑولیٰ کے عظیم مسلمانوں کی یاد تازہ ہوگئی۔

صحرائی صاحب تحریک آزادئ کشمیر کا درخشندہ باب ہیں۔ ایک ایسا باب جو طویل عرصے تک قافلہ سخت جان کے راہروان کے لیے نشان منزل کی حیثیت سے رہنمائی کرتا رہے گا۔ ان کی پامردی و استقلال ایک مظلوم قوم کا سہارا تھا، جس سے محرومی طویل وقت تک محسوس ہوتی رہے گی۔ اس خلا کی بھرپائی بہت مشکل ہے۔ اللہ سے دعا ہے کہ وہ ہماری مظلوم قوم کو بہترین نعم البدل سے نوازے۔ (آمین)

ابو لقمان – کشمیر

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us