پیر, جون 14 Live
Shadow
سرخیاں
ترکی: 20 ٹن سونا اور 5 ٹن چاندی کا نیا ذخیرہ دریافت، ملکی سالانہ پیداوار 42 ٹن کا درجہ پار کر گئی، 5 برسوں میں 100 ٹن تک لے جانے کا ارادہحکومت پنجاب کا ویکسین نہ لگوانے والوں کے موبائل سم کارڈ معطل کرنے کی پالیسی لانے کا فیصلہموساد کے سابق سربراہ کا ایرانی جوہری سائنسدان اور مرکز پر سائبر حملے کا اعترافی اشارہ: ایرانی سائنسدانوں کو منصوبہ چھوڑنے پر معاونت کی پیشکش کر دییورپی اشرافیہ و ابلاغی اداروں کے برعکس شہریوں کی نمایاں تعداد نے روس کو اہم تہذیبی شراکت دار و اتحادی قرار دے دیاروسی بحریہ نے سٹیلتھ ٹیکنالوجی سے لیس جدید ترین بحری جہاز کا مکمل نمونہ تیار کر لیا: مکمل جہاز آئندہ سال فوج کے حوالے کر دیا جائےگاٹویٹر کو نائیجیریا میں دوبارہ بحالی کیلئے مقامی ابلاغی اداروں کی طرح لائسنس لینا ہو گا، اندراج کروانا ہو گا: افریقی ملک کا امریکی سماجی میڈیا کمپنی کو دو ٹوک جواب، صدر ٹرمپ کی جانب سے پابندی پر ستائش کا بیانکاراباخ آزادی جنگ: جنگی قیدی چھڑوانے کے لیے آرمینی وزیراعظم کی آزربائیجان کو بیٹے کی حوالگی کی پیشکشمجھ پر حملے سائنس پر حملے ہیں: متنازعہ امریکی مشیر صحت ڈاکٹر فاؤچی کا اپنے دفاع میں نیا متنازعہ بیان، وباء سے شدید متاثر امریکیوں کے غصے میں مزید اضافہچین 3 سال کے بچوں کو بھی کووڈ-19 ویکسین لگانے والا دنیا کا پہلا ملک بن گیاایرانی رویہ جوہری معاہدے کی بحالی میں تعطل کا باعث بن سکتا ہے: امریکی وزیر خارجہ بلنکن

میرا کشمیر شبِ تاریک کے مشعل بردار سے محروم کر دیا گیا

 وہ اک ستارہ جو ضوفگن تھا حیات کے مغربی افق پر
 سیاہ شب کے پاسبانو خوشی مناؤ کہ وہ بھی ڈوبا 

محمد اشرف خان صحرائی، کشمیر

شبِ تاریک میں کسی قافلے کے مشعل بردار کا چھن جانا ایک ایسا نقصان ہے جس کی بھرپائی ایک مشکل عمل ہے۔ تاریک راتوں میں قندیل رہبانی کا کام انجام دینے والوں کی تعداد بہت مختصر ہوتی ہے۔ ملت اسلامیہ کشمیر ایسے ہی ایک چراغ سے محروم ہوگئی۔  تحریکِ آزادئ کشمیر کی صف اوّل کے رہنما محمد اشرف خان صحرائی سنت یوسفی کی ادائیگی کے دوران اپنے خالق حقیقی سے جا ملے، اور کشمیری قافلے کا ایک اور چراغ بجھ گیا۔ صحرائی صاحب کا ثبات کوہِ بلند قامت جیسا تھا۔ ایک اونچی چوٹی والے پہاڑ کی مانند، جو زلزلوں میں بھی قائم رہتا ہے۔ وہ عظمتوں اور عزیمتوں کا ایک ایسا پہاڑ تھے جن کے ثبات سے انسانیت حق پر ثابت قدم رہنے کا سبق سیکھتی ہے۔

یہ صحرائی صاحب ہی تھے جنہوں نے عالمِ شباب میں شیخ عبداللہ کو 1975 کے اسمبلی انتخابات میں للکارا تو کاغذی شیرِ کشمیر کی ساری شیخی ہوا ہوگئی، اور وہ اپنی عادت سے مجبور اُوچھی حرکتوں اور دھونس دباؤ کی سیاست پر اتر آیا، لیکن نمائندہ کشمیر کے قدم نہیں ڈگمگائے، بلکہ اُن کی للکار وادی کے طول و عرض میں ایک ایسے انقلاب کو صور پھونک گئی جس نے خفتہ نوجوانوں کے عزم کو مہمیز عطا کردی۔

صحرائی صاحب ایک صاف گو انسان تھے۔ وہ حق بات کہنے والے اور حق بات پر مثلِ چٹان قائم رہنے والے قائد تھے۔ انہوں نے مشکل ترین ادوار میں بھی تحریکِ کشمیر کے حوالے سے اپنے مؤقف میں ذرہ برابر بھی انحراف نہ کیا۔ وہ ہر قیمت ادا کرکے حق کی بات کہنے والے تھے۔

صحرائی صاحب قربانی کا استعارہ تھے، گویا اُن کی شخصیت کا دوسرا نام ہی فدا کاری ہو۔ وہ رضائے رب کی خاطر سب کچھ تج دینے والا ایک منفرد مسافر تھا۔ ایک ایسا مسافر جو سفر کی تکان کا بالکل بھی شاکی نہ تھا۔ اُن پر بس ایک ہی دھن سوار تھی، اپنی منزل پر پہنچنے کی دھن۔ اپنی زندگی کے طویل 14 سالوں کے ماہ و سال جیل کی تاریک کوٹھڑی میں گزار کر بھی وہ اس منزل کا خواب دیکھنے سے باز نہیں آئے۔

اُن کی شخصیت کا خاصہ یہ تھا کہ وہ سب کچھ براہیمیؑ طرز پر وار دینے والی قبیل سے تعلق رکھتے تھے۔ جوانی، شباب، عمر حیات، مال و اسباب، اپنا لخت جگر، اور آخر میں اپنا وجود وار دینا اُن ہی کی شخصیت کا ایک مختصر خاکہ ہے۔ صرف ایک سال پہلے اُن کا لخت جگر داد شجاعت دیتے ہوئے مرتبہ شہادت پر فائز ہوا۔ اپنے لخت جگر کی شہادت پر جس عزم و ثبات کا مظاہرہ انہوں نے کیا اُس سے قرون اؑولیٰ کے عظیم مسلمانوں کی یاد تازہ ہوگئی۔

صحرائی صاحب تحریک آزادئ کشمیر کا درخشندہ باب ہیں۔ ایک ایسا باب جو طویل عرصے تک قافلہ سخت جان کے راہروان کے لیے نشان منزل کی حیثیت سے رہنمائی کرتا رہے گا۔ ان کی پامردی و استقلال ایک مظلوم قوم کا سہارا تھا، جس سے محرومی طویل وقت تک محسوس ہوتی رہے گی۔ اس خلا کی بھرپائی بہت مشکل ہے۔ اللہ سے دعا ہے کہ وہ ہماری مظلوم قوم کو بہترین نعم البدل سے نوازے۔ (آمین)

ابو لقمان – کشمیر

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us