ہفتہ, جنوری 15 Live
Shadow
سرخیاں
قازقستان ہنگامے: مشترکہ تحفظ تنظیم کے سربراہ کا صورتحال پر قابو کا اعلان، امن منصوبے کی تفصیلات پیش کر دیںبرطانوی پارلیمنٹ میں منشیات کا استعمال: اسپیکر کا سونگھنے والے کتے بھرتی کرنے کا عندیاامریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟

ٹویٹر کا متعصب رویہ اب آفاقی سچ کو بھی نفرت قرار دینے لگا: ہسپانوی سیاستدان کے مردوں کے بچہ نہ جننے کی ٹویٹ پر کھاتہ معطل، صارفین کا طنزوں سے جواب

ہسپانوی سیاستدان فرانسسکو کونٹریراس کا ٹویٹر کھاتہ عارضی طور پر معطل کردیا گیا۔ سماجی میڈیا ویب سائٹ نے دائیں بازو کی جماعت کے کارکن کا کھاتہ “مرد حاملہ نہیں ہوسکتا” لکھنے پر معطل کیا ہے، ٹویٹر کا مؤقف ہے کہ ٹویٹ نفرت انگیز تھی اور نفرت پھیلانا انکی پالیسی کے خلاف ہے۔

کونٹریراس کو اپنے ٹویٹر کھاتے کو 12 گھنٹے تک یہ کہنے کی پاداش میں معطل کر دیا گیا کہ مردوں کے پاس “کوئی بچہ دانی یا انڈے نہیں ہیں اور اس وجہ سے وہ بچے پیدا نہیں کرسکتے ہیں”۔ انہوں نے یہ تبصرہ ایک مضمون کے جواب میں لکھا تھا جس میں ایک مخنث مرد نے یہ اعلان کیا تھا کہ وہ بچہ پیدا ہونے کے بعد باپ بن گئے ہیں۔

انہوں نے بعد میں فیس بک پر لکھا کہ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ حقیقی فاشسٹ زندگی کیسی ہوتی ہے۔ اگلی بار میں 2 + 2 = 4  لکھنے کی کوشش کروں گا اور شاید ٹویٹر اس پر بھی میرا کھاتہ معطل کر دے۔

ٹویٹر نے ان پر اپنی پالیسی کی خلاف ورزی کرنے کا الزام عائد کیا ہے جو دوسروں کے خلاف نسلی، جنسی رجحان، یا صنف کی بنیاد پر تشدد کا خطرہ پیدا کرتا ہے یا اسے فروغ دیتا ہے۔ اس کے جواب میں کونٹریراس کے حامیوں نے مرد حاملہ نہیں ہوسکتا کا ہیش ٹیگ لگا کر ان کی حمایت کردی ہے۔

 کونٹریراس نے مزید کہا ہے کہ ہم انسانی فطرت کے بارے میں سچ بولتے رہیں گے۔ حیاتیاتی سچائی کو “نفرت انگیز تقریر” نہیں سمجھنا چاہئے۔ یہ آفاقی سچ ہے، تعصب نہیں۔

 بہت سے لوگوں نے فیس بک پر کونٹریراس کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔ کچھ لوگوں نے یہ ٹویٹر کا مذاق اڑایا ہے کہ امریکی لبرل ویب سائٹ کی سنسرشپ ہسپانوی انکوائزیشن سے بھی بدتر ہے۔

کچھ صارفین نے 19 ویں صدی کے انگریز مصنف، فلسفی اور نقاد گلبرٹ کیتھ چیسٹرٹن کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ گلبرٹ ٹھیک کہتا تھا کہ مغربی تہذیب کی بنیاد میں مسئلہ ہے اور ہم جلد ہی ایسی دنیا میں ہوں گے جہاں ایک آدمی پر لوگ اس لیے چیخیں گے کہ وہ صرف یہ کہے گا کہ دو اور دو چار ہوتے ہیں” اور ایک دن لوگ کسی شخص کو اس لیے پھانسی دے دیں گے کہ وہ کسی ہجوم کو یہ کہہ کر غصہ دلا دے کہ گھاس سبز ہوتا ہے۔

 کونٹریراس کے کچھ حمایتوں نے جارج آرول کے کلاسک ناول ‘1984’ کا بھی حوالہ دیا جس میں جابرانہ حکومت کی طرف سے ایک مرکزی کردار کی خواہش کو توڑنے کی کوشش کی جاتی ہے۔

ٹویٹر نے اس سے پہلے جنوری میں شمالی افریقی مہاجرین کے خلاف تشدد سے متعلق ایک تبصرے کی بنیاد پر ووکس تنظیم کے رسمی کھاتے کو بھی 24 گھنٹوں کے لیے معطل کردیا تھا۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us