پیر, دسمبر 6 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

امریکی اور اسرائیلی محکمہ مالیات میں اہم سائبر سکیورٹی معاہدہ: عالمی ڈیجیٹل مالیاتی ڈھانچے کو مزید مظبوط کرنے پر اتفاق

امریکہ اور فلسطین پر قابض صیہونی انتظامیہ کے مابین سائبر سکیورٹی کا نیا معاہدہ طے پایا ہے جس کے تحت عالمی مالیاتی نظام پر کنٹرول کو مزید سخت اور مظبوط کیا جائے گا۔ امریکی وزارت مالیات نے اسرائیلی شعبہ مالیات کے ساتھ اہم اتحاد کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ دونوں مل کر عالمی مالیاتی نظام کو سائبر حملوں سے محفوظ بنانے پر کام کریں گے۔

امریکی محکمہ مالیات کی جانب سے جاری بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ سائبر سکیورٹی کے لیے خصوصی مشترکہ عملہ بھرتی کیا جائے گا جو ڈیجیٹل مالیاتی ڈھانچے اور شعبے میں ہونے والی جدید ترین پیش رفت سے متعلق نہ صرف انتظامیہ کو آگاہ رکھے گا بلکہ امریکی اور عالمی مالیاتی نظام کے تحفظ پر بھی کام کرے گا۔

امریکی وزارت کے ایک اہم عہدے دار نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ امریکہ اور اسرائیل نے رینسم ویئر سے بہت نقصان اٹھایا ہے، یہ اتحاد ناگزیر تھا، اس سے امریکی معیشت اور قومی سلامتی کے مفادات کو یقینی بنایا جائے گا۔

معاہدے کے تحت امریکہ اور قابض صیہونی انتظامیہ سائبر سکیورٹی سے متعلق خطرات سے ایک دوسرے کو آگاہ رکھیں گے، اور کسی حملے کی صورت میں مل کر دفاع پر کام کریں گے۔ معاہدے کے تحت امریکہ آئندہ سال تل ابیب میں ہونے والی کانفرنس میں سرمایہ کاری اور شرکت بھی کرے گا۔

واضح رہے کہ قابض صیہونی انتظامیہ نے کچھ روز قبل خود کو بدنام زمانہ این ایس او گروپ سے الگ کرنے کا اعلان کیا تھا، انتظامیہ کا مؤقف تھا کہ عالمی سطح پر جاسوسی کرنے والی کمپنی سے اسکا کوئی تعلق نہیں۔ جبکہ ماہرین کا خیال ہے کہ دنیا بھر میں صحافیوں، اعلیٰ ریاستی و سیاسی قائدین کی جاسوسی میں صیہونی انتظامیہ خود ملوث تھی۔ اسرائیلی انتظامیہ کے مطابق کمپنی حکومتی اجازت کے بغیر سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور ہندوستان کی حکومتوں کو بھی جاسوسی میں مدد فراہم کرتی رہی ہے۔

دنیا بھر میں این ایس او گروپ کے کالے کارناموں عیاں ہونے پر قابض انتظامیہ کے امور خارجہ کے ذمہ دار کا کہنا تھا کہ این ایس او ایک نجی کمپنی ہے، اسکے کسی کام سے حکومت کا کوئی تعلق نہیں۔

یاد رہے کہ امریکہ نے کاندیرو نامی اسرائیلی کمپنی پر بھی دنیا بھر میں اہم شخصیات کی جاسوسی کرنے کے الزام پر پابندی لگا دی ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us