ہفتہ, اکتوبر 31 Live
Shadow

امریکہ کی بیجنگ کو ہیوسٹن میں قونصل خانہ بند کرنے کی ہدایت ۔ چینی وزارت خارجہ

چینی وزارتِ خارجہ نے کہا کہ امریکہ نے ٹیکساس کے شہر ہیوسٹن میں چین کو اپنا قونصل خانہ بند کرنے کو کہا۔ بیجنگ نے اس اقدام کی مذمت کرتے ہوۓ کہا کہ اگر یہ فیصلہ واپس نہ لیا گیا تو جوابی کارروائی کی جاۓ گی۔

چینی وزارتِ خارجہ کے ترجمان وانگ وین بین نے قونصل خانے کو بند کرنے کے حکم کو سیاسی اشتعال انگیزی اور بین الاقوامی قانون کی سنگین خلاف ورزی قرار دیا۔

چین نے امریکہ سے فوری طور پر اس غلط فیصلے کو کالعدم قرار دینے کی اپیل کی ہے۔ بصورت دیگر ، چین مناسب اور ضروری جواب دے گا۔
چین کے گلوبل ٹائمز کے چیف ایڈیٹر ہوژیجن نے ٹویٹ کیا کہ بیجنگ کو قونصل خانے کی عمارت خالی کرنے کے لئے 72 گھنٹے کا وقت دیا گیا۔ یہ ایک پاگل اقدام ہے ۔

چینی ترجمان نے امریکی محکمہ انصاف کے حالیہ دعوے کو مسترد کردیا کہ چینی ہیکرز نے کوویڈ ۔19 ویکسین کی تیاری سے متعلق اعداد و شمار چوری کرنے کی کوشش کی ہے۔ انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ امریکہ کو سائبر سیکیورٹی کے معاملات پر چین پر اپنی بہتان بازی اور بدعنوانی کو فوری طور پر روکنا چاہئے۔
امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان مورگن اورٹاگس نے کہا کہ قونصل خانے کے خلاف یہ اقدام امریکی دانشورانہ املاک اور امریکی شہریوں کے شخصی اعداد و شمار کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے کیا گیا ہے۔

امریکہ اور چین کے تعلقات حالیہ ہفتوں میں تیزی سے خراب ہوتے جارہے ہیں۔ اس ماہ کے شروع میں ، صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ہانگ کانگ میں اپنی پالیسیوں پر چین پر پابندیوں کے مجاز کے ایک بل پر دستخط کیے تھے۔ امریکی خزانے نے چین کے شمال مغربی سنکیانگ خطے میں ایک نسلی اقلیت ، ایغور کے ساتھ بیجنگ کے امتیازی سلوک کرنے پر متعدد اعلی چینی عہدیداروں پر بھی پابندی لگا دی تھی۔
بیجنگ نے متعدد ممتاز امریکی سیاستدانوں پر پابندی لگا کر ردعمل ظاہر کیا ، جن میں سینیٹرز مارکو روبیو اور ٹیڈ کروز شامل ہیں۔ چین نے کہا ہے کہ امریکی پابندیاں غیر قانونی ہیں اور چین کے اندرونی معاملات میں مداخلت کے سوا کچھ نہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں