ہفتہ, جنوری 15 Live
Shadow
سرخیاں
قازقستان ہنگامے: مشترکہ تحفظ تنظیم کے سربراہ کا صورتحال پر قابو کا اعلان، امن منصوبے کی تفصیلات پیش کر دیںبرطانوی پارلیمنٹ میں منشیات کا استعمال: اسپیکر کا سونگھنے والے کتے بھرتی کرنے کا عندیاامریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟

یوٹیوب نے ویڈیو سے کمائی پر امریکی ٹیکس لگا دیا، اطلاق دنیا بھر سے صارفین پر ہو گا: صارفین سخت ناراض

یوٹیوب نے ویب سائٹ سے کمائی کرنے والے بین الاقوامی صارفین پر امریکی ٹیکس لگا دیا ہے۔ اپنی نوعیت کا انوکھا ٹیکس غیر ملکی ٹیکس لگنے پر دنیا بھر سے صارفین کی جانب سے ناراضگی کا اظہار کای جا رہا ہے۔ گزشتہ روز گوگل کی ویڈیو ویب سائٹ نے اعلان کیا ہے کہ اب ویب سائٹ سے کمائی کرنے والوں کو امریکی ٹیکس بھی دینا ہو گا۔

یاد رہے کہ دنیا کی سب سے مقبول ویڈیو ویب سائٹ نے نئی پالیسی گزشتہ امریکی انتخابات کے بعد متعارف کی تھی تاہم اس وقت میڈیا نے اس خبر کو دبائے رکھا، اور اب جبکہ یوٹیوب نے خود اپنے سماجی میڈیا کھاتوں پر جلد کٹوتی کی خبر دی ہے تو دنیا بھر سے صارفین کی جانب سے ناراضگی کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

یوٹیوب کے اعلان کے مطابق اشتہارات، پریمیم خدمات، تبصروں، سٹیکروں حتیٰ کہ کسی چینل کے پیروکاروں کی تعداد پر بھی ٹیکس لگایا جائے گا۔

پالیسی کے تحت غیر ملکی صارفین کے لیے بھی ٹیکس کے وہی قوانین ہوں گے جو امریکی شہریوں کے لیے ہیں، اور گزشتہ نومبر سے ان پر عملدرآمد ہو رہا ہے۔

امریکی ابلاغی ٹیکنالوجی کمپنی کی پالیسی پر دنیا بھر سے ناراضگی کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ جن میں خصوصاً یورپی اور کینیڈا کے صارف سرفہرست ہیں۔

کینیڈا سے رقص کے استاد نے اپنی رائے میں کہا ہے کہ میں کینیڈا کا شہری ہوں، کینیڈا میں کام کرتا ہوں، میں پہلے ہی یوٹیوب سے ہونے والی کمائی پر کینیڈا میں ٹیکس دیتا ہوں، لیکن اب مجھے امریکی ٹیکس بھی دینا ہو گا، جبکہ میں وہاں کا شہری بھی نہیں ہوں۔

سکاٹ لینڈ سے تعلق رکھنے والے مزاح نگار مارک کاؤنٹ ڈانکولا نے پالیسی پر ردعمل میں کہا ہے کہ یہ ایسے ہی ہے کہ کل کو امریکہ مجھ پر ڈرون ٹیکس لگا دے۔

ایک صارف نے لکھا ہے کہ یوٹیوب پہلے ہی صارفین سے انکی کمائی کا 45٪ ہڑپ کر جاتی ہے، لیکن ٹیکس ہم سے لیا جا رہا ہے، صارف نے لکھا کہ یہ بات بالکل سمجھ سے باہر ہے کہ ایک غیر امریکی سے امریکی حکومت کیسے ٹیکس لے سکتی ہے؟

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us