اتوار, مئی 9 Live
Shadow
سرخیاں
روسی بحریہ میں ایک اور جدید ترین آبدوز کازان شاملچینی راکٹ خلائی اسٹیشن منزل پر کامیابی سے پہنچا کر بحیرہ ہند کی فضاؤں میں جل کر بھسم: آبادی والے علاقے میں گرنے کے مغربی پراپیگنڈے پر چین کا افسوس کا اظہارکابل: اسکول پر راکٹ حملے میں متعدد طالبات سمیت 30 جاں بحق، 50 زخمیروس: دوسری جنگ عظیم میں نازی جرمنی کے خلاف فتح کا جشن، ماسکو میں فوجی پریڈ کا انعقاد – براہ راست ویڈیومالدیپ کے سابق صدر محمد نشید بم حملے میں بال بال بچ گئےبرازیل میں پولیس کے منشیات فروشوں کے خلاف چھاپے جاری: 3 روز میں 1 پولیس افسر سمیت 28 ہلاکعراق: نیٹو افواج کے زیر استعمال ہوائی اڈے پر ڈرون حملہ، کوئی جانی نقصان نہ ہونے کا دعویٰامریکی تیل ترسیل کی سب سے بڑی کمپنی پر سائبر حملہ: ملک بھر میں پہیہ جام ہونے کا خطرہ منڈلانے لگااسرائیل کوئی ریاست نہیں ایک دہشت گرد کیمپ ہے: ایرانی ریاستی سربراہ علی خامنہ ایاطالوی پولیس افسر کے قتل کے جرم میں دو امریکی سیاحوں کو عمر قید کی سزا

رواں برس میں اب تک تیل کے شعبے میں سرمایہ کاری کرنے والوں کی دولت میں 51 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا

دنیا میں تیل کے کاروبار سے وابستہ افراد کی دولت میں 2021 میں 51 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔ امریکی نشریاتی ادارے بلومبرگ کے مطابق امریکی تیل کی صنعت سے وابستہ ارب پتی ہارولڈ ہمم کی دولت 3 اعشاریہ 3 ارب ڈالر سے بڑھ کر 8 اعشاریہ 4 ارب ڈالر ہوگئی ہے اور یوں انکے اثاثہ جات میں 59٪ کا اضافہ ہوا ہے۔

ہندوستانی ارب پتی گوتم ادانی کی دولت 23 اعشاریہ 3 ارب سے بڑھ کر 57 اعشاریہ 1 ارب ڈالر ہو گئی ہے، اور یوں گوتم رواں سال میں اب تک دنیا میں سب سے زیادہ دولت کمانے والے شخص بن گئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق توانائی کے شعبے سے وابستہ افراد کی دولت میں رواں سال میں اب تک 10٪ کا حد درجہ اضافہ ہوا ہے۔ صورتحال کو بھانپتے ہوئے دنیا بھر میں سرمایہ کار توانائی کےشعبے میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں، جس میں خصوصی طور پر تیل اور گیس کے ذخائر بنانے پر توجہ دی جارہی ہے۔ سرمایہ کار سستے داموں تیل خرید کر اسے محفوظ کرنے اور بعد میں عالمی مارکیٹ میں مہنگا ہونے پر بیچنے کے کلیے سے امیر ہو رہے ہیں۔

جے پی مورگن اور گولڈمین ساشا بینک نے بھی فروری 2021 میں پیشنگوئی کی تھی کہ تیل کے شعبے میں جلد مزید ایک گراوٹ آئے گی جس میں سرمایہ کاری کرنے سے مزید لوگ فائدہ اٹھا سکیں گے۔ تاہم بین الاقوامی توانائی ایجنسی نے اس پیشنگوئی کو مسترد کیا تھا اور کہا تھا کہ تیل کی ترسیل اور استعمال جاری ہے، قیمتیں گرنے کا کوئی امکان نہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us