ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

رواں برس میں اب تک تیل کے شعبے میں سرمایہ کاری کرنے والوں کی دولت میں 51 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا

دنیا میں تیل کے کاروبار سے وابستہ افراد کی دولت میں 2021 میں 51 ارب ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔ امریکی نشریاتی ادارے بلومبرگ کے مطابق امریکی تیل کی صنعت سے وابستہ ارب پتی ہارولڈ ہمم کی دولت 3 اعشاریہ 3 ارب ڈالر سے بڑھ کر 8 اعشاریہ 4 ارب ڈالر ہوگئی ہے اور یوں انکے اثاثہ جات میں 59٪ کا اضافہ ہوا ہے۔

ہندوستانی ارب پتی گوتم ادانی کی دولت 23 اعشاریہ 3 ارب سے بڑھ کر 57 اعشاریہ 1 ارب ڈالر ہو گئی ہے، اور یوں گوتم رواں سال میں اب تک دنیا میں سب سے زیادہ دولت کمانے والے شخص بن گئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق توانائی کے شعبے سے وابستہ افراد کی دولت میں رواں سال میں اب تک 10٪ کا حد درجہ اضافہ ہوا ہے۔ صورتحال کو بھانپتے ہوئے دنیا بھر میں سرمایہ کار توانائی کےشعبے میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں، جس میں خصوصی طور پر تیل اور گیس کے ذخائر بنانے پر توجہ دی جارہی ہے۔ سرمایہ کار سستے داموں تیل خرید کر اسے محفوظ کرنے اور بعد میں عالمی مارکیٹ میں مہنگا ہونے پر بیچنے کے کلیے سے امیر ہو رہے ہیں۔

جے پی مورگن اور گولڈمین ساشا بینک نے بھی فروری 2021 میں پیشنگوئی کی تھی کہ تیل کے شعبے میں جلد مزید ایک گراوٹ آئے گی جس میں سرمایہ کاری کرنے سے مزید لوگ فائدہ اٹھا سکیں گے۔ تاہم بین الاقوامی توانائی ایجنسی نے اس پیشنگوئی کو مسترد کیا تھا اور کہا تھا کہ تیل کی ترسیل اور استعمال جاری ہے، قیمتیں گرنے کا کوئی امکان نہیں۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us