ہفتہ, April 9 Live
Shadow
سرخیاں
افغانستان میں امریکی فوج کی جانب سے تشدد کی تربیت کے لیے بلوچی قیدی کو استعمال کرنے کا انکشافہندوستانی میزائل کا مبینہ غلطی سے پاکستانی حدود میں گرنے کا واقعہ: امریکہ کی طرف سے متعصب جبکہ چین کی جانب سے نصیحت آمیز ردعملمیٹا آسٹریلوی سیاستدانوں کو سائبر حملوں اور جھوٹی خبروں سے بچنے کی تربیت دے گییوکرین: مغربی ممالک سے آئے 180 سے زائد جنگجو ہوائی حملے میں ہلاک، روس کی مغربی ممالک کو تنبیہ، سب نشانے پر ہیں، چُن چُن کر ماریں گےاسرائیل پر تاریخ کا بڑا سائبر حملہ: وزیراعظم، وزارت داخلہ اور وزارت صیہونی بہبود کی ویب سائٹیں ہیک اور تلفروس اور یوکرین کے مابین جلد امن معاہدہ طے پا جائے گا: روسی مذاکرات کاریوکرینی مہاجرین کی تعداد 50 لاکھ سے بڑھ گئی: اقوام متحدہفیس بک اور انسٹاگرام کی شدید متعصب پالیسی کا اعلان: روسی صدر اور فوج کیخلاف نفرت اور موت کے پیغامات شائع کرنے کی اجازت، نتیجتاً مغربی ممالک میں آرتھوڈاکس کلیساؤں اور روسی کاروباروں پر حملوں کی خبریںترکی کا بھی روس کے ساتھ مقامی پیسے میں تجارت کرنے کا اعلانمغرب کے دوہرے معیار: دنیا پر روس سے تجارت پر پابندیاں، برطانیہ سمیت بیشتر مغربی ممالک روس سے گیس و تیل کی خریداری جاری رکھیں گے

نیٹو کی یوکرین کے ساتھ عسکری سرگرمیاں: روس برہم، امریکہ کو تنبیہ و بات چیت کی دعوت

نیٹو کی جانب سے یوکرینی فوج کی روس کے خلاف جنگ کی تربیت اور مدد کی خبروں پر ماسکو کی طرف سے سخت ردعمل سامنے آیا ہے۔ حالات کو مزید کشیدگی سے بچانے کے لیے روس نے امریکہ کو بات چیت کے لیے مدعو کیا ہے۔ روسی نائب وزیر خارجہ سرگئی کیابکوف کا کہنا ہے کہ حکومت نے امریکہ کو دونباس کے علاقے میں نیٹو سرگرمیوں سے آگاہ کیا ہے اور تنبیہ کی ہے کہ امریکی پالیسی کے اثرات اچھے نہیں ہوں گے۔

یاد رہے کہ دو دن قبل امریکی دفتر خارجہ کے ترجمان نیڈپرائس نے روس کی جانب سے یوکرین کی سرحد پر عسکری نقل و حرکت بڑھانے پر تحفظات کا اظہار کیا تھا، اور کہا تھا کہ خطے میں کشیدگی کو کم کرنے کے لیے امریکہ روس کے ساتھ بات چیت کرنے کو تیار ہے۔ امریکی نے الزام لگایا تھا کہ روس یوکرین پر حملے اور جنگ کی تیاری کر رہا ہے۔

روس نے الزامات کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ فوج کو کوئی خصوصی ہدایات نہیں دی گئیں، تمام نقل وحرکت عمومی ہے۔ اور اس سے پہلے بھی نیٹو کی سرگرمیوں کے مطابق روسی فوج سرحد پر اپنی سرگرمیاں بڑھاتی رہتی ہے۔

واضح رہے کہ رواں ہفتے کے آغاز میں دونباس پر گفتگو کے دوران یوکرینی نمائندے نے روس سے جنگ کی صورت میں امریکی مدد کے وعدے کا دعویٰ کیا تھا۔ اس کے علاوہ نیٹو نے دفاع یورپ کے نام پر بڑی عسکری مشقوں کا آغاز کر دیا ہے، جس میں اطلاعات کے مطابق یوکرینی فوجیوں کو روسی فوج سے جنگ کی تربیت بھی دی جا رہی ہے۔ یاد رہے کہ یوکرین نیٹو کا رکن نہیں ہے۔

مشقوں میں 20 ہزار سے زائد امریکی فوجی حصہ لے رہے ہیں، اور یہ تعداد 21ویں صدی میں امریکہ کی کسی بھی جنگی مشق میں جھونکی فوجیوں کی سب سے بڑی تعداد ہے۔

نیٹو نے اپنی وضاحت میں کہا ہے کہ مشقوں کا مقصد بین الاقوامی سطح پر بڑی خطروں سے نمٹنے کی تیاری کرنا اور یورپ کے تحفظ کو یقینی بنانا ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us