پیر, دسمبر 6 Live
Shadow
سرخیاں
امریکی سی آئی اے اہلکاروں کے ایک بار پھر کم عمر بچوں بچیوں کے ساتھ جنسی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشافامریکہ کا مشرقی افریقہ میں تاریخ کے سب سے بڑے فوجی آپریشن کا اعلان: 1 ہزار سے زائد مزید کمانڈو تیارروسی صدر کی ثالثی: آزربائیجان اور آرمینیا کے مابین سرحدی جھڑپیں ختم، سرحدی حدود کے تعین پر اتفاق، جنگ سے متاثر آبادی اور دیگر انسانی حقوق کے تحفظ کی بھی یقین دہانینائیجیر: فرانسیسی فوج کی فائرنگ سے 2 شہری شہید، 16 زخمیامریکی فوج میں ہر 4 میں سے 1 عورت اور 5 میں سے 1 مرد جنسی زیادتی کا نشانہ بنتا ہے، بیشتر خود کشی کر لیتے، کورٹ مارشل کے خوف سے کوئی آواز نہیں اٹھاتا: سابقہ اہلکارروس کا غیر ملکی سماجی میڈیا کمپنیوں پر ملک میں کاروباری اندراج کے لیے دباؤ جاری: رواں سال کے آخر تک عمل نہ ہونے پر پابندی لگانے کا عندیاامریکہ ہائپر سونک ٹیکنالوجی میں چین اور روس سے بہت پیچھے ہے: امریکی جنرل تھامپسنامریکی تفریحی میڈیا صنعت کس عقیدے، نظریے اور مقصد کے تحت کام کرتی ہے؟چوالیس فیصد امریکی اولاد پیدا کرنے کی خواہش نہیں رکھتے: پیو سروے رپورٹچینی کمپنی ژپینگ نے جدید ترین برقی کار جی-9 متعارف کر دی: بیٹری کے معیار اور رفتار میں ٹیسلا کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

نیویارک میں چینی النسل افراد پر نسلی تعصب کی بنیاد پر حملوں میں 400 گناء اضافہ: حالیہ حملے میں 2 تائیوانی لڑکیوں پر ہتھوڑی سے حملہ کیا گیا، دونوں شدید زخمی ہیں

امریکہ میں نسلی تعصب کی بنیاد پر نفرت کے اظہار کی نئی لہر کے دوران مشرق بعید کے افراد کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ ایک حالیہ واقعے میں نیویارک کے مرکزی مقام ٹائمز چوک میں دو تائیوانی لڑکیوں کو نشانہ بنایا گیا ہے جس میں ایک مقامی خاتون نے ہتھوڑی کے وار کر کے انہیں شدید زخمی کر دیا۔

بلااشتعال ہونے والے اس حملے کے نتیجے میں ایک لڑکی کو سر پر 7 ٹانکے لگے ہیں جبکہ دوسری کو بھی نمایاں جگہوں پر چوٹیں آئی ہیں۔

پولیس کی جانب سے جاری کردہ سی سی ٹی وی ویڈیو میں بھی دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک خاتون قریب سے گزرتی دو خواتین پر اچانک پیچھے سے حملہ کر دیتی ہے۔ پولیس نے حملہ آور کی شناخت میں مدد کرنے والے کے لیے انعام کا اعلان کیا ہے۔

واضح رہے کہ امریکہ میں بالعموم اور نیو یارک میں بالخصوص ایشائی نژاد افراد پر نسلی تعصب پر مبنی حملوں میں اضافہ ہوا ہے، پولیس کے پاس درج شکایات کے مطابق ایک سال میں ان حملوں میں 400٪ اضافہ ہوا ہے، جبکہ آزاد زرائع کا کہنا ہے کہ بہت سے واقعات پولیس کے پاس درج ہی نہیں کروائے جاتے۔

گزشتہ ماہ ایک 61 سالہ خاتون کو بھی اسی نفرت کا سامنا کرنا پڑا جبکہ 2002 میں اپنی ماں کے قتل میں ملوث ایک شخص کو پیرول پر آزاد کر دیا گیا جس نے بعد میں ایک ایشیائی نژاد 65 سالہ خاتون کا قتل کر دیا۔ ایسے ہی ایک واقع میں ایک مقامی شخص نے 61 سالہ فلپینی شہری کا ٹرین میں کان کاٹ دیا گیا۔

تائیوانی لڑکیاں بھی امریکہ کی تعلیم یافتہ ہیں، مقامی میڈیا سے گفتگو میں ان کا کہنا ہے کہ وہ اب امریکہ میں نہیں رہنا چاہتیں اور فوری واپسی کا بندوبست کر رہی ہیں۔

نسلی تعصب پر مبنی حملوں میں اضافے کے پیش نظر نیو یارک پولیس نے اس سے نمٹنے کے لیے الگ شعبہ بھی تشکیل دے رکھا ہے لیکن اس کے باوجود حملوں میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

ماہرین کے مطابق حملوں میں اضافے کی ایک بڑی وجہ امریکی سیاست اور میڈیا میں چین کے خلاف ہونے والا پراپیگنڈا ہے، اور موجودہ حالات میں اس میں مزید اضافہ متوقع ہے۔

دوست و احباب کو تجویز کریں

تبصرہ کریں

Contact Us